.

افغان شہریوں اور مہاجرین کو تحفظ دیا جائے: ملالہ کی اپیل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

برطانیہ میں مقیم نوبل انعام یافتہ پاکستانی طالبہ ملالہ یوسفزئی نے اپنی ایک ٹوئٹ میں افغانستان میں طالبان کی پیش قدمی کی تیز رفتاری پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ ’دھچکے‘ میں آ گئی ہیں۔

نوبل انعام یافتہ ملالہ نے کہا کہ وہ اب افغانستان میں خواتین، اقلیتوں اور انسانی حقوق کے سرکردہ علمبرداروں کے لیے فکر مند ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ عالمی طاقتوں کو افغانستان میں سیز فائر کی کوششیں تیز کر دینا چاہیے۔ ملالہ کے مطابق افغانستان میں شہریوں اور مہاجرین کے تحفظ فراہم کرتے ہوئے ان کے لیے فوری امداد کو یقینی بنانا چاہیے۔

ملالہ یوسف زئی 15 سال کی تھی جب 2012 میں پاکستان کی وادی سوات میں طالبان نے اس کے چہرے پر گولی ماری۔ وہ اس کو اور دیگر لڑکیوں کو تعلیم حاصل کرنے سے روکنا چاہتے تھے۔ وہ شدید زخموں سے جانبر ہو گئی اور جنگ جاری رکھی۔