.

بحری مشق نسیم البحر 13 کے دوران پاکستان اور سعودی فورسز کا جنگی قوت کا مظاہرہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

بحری مشق نسیم البحر 13 کے دوران پاک بحریہ، رائل سعودی نیول اور ائیر فورسز نے شمالی بحیرہ عرب میں شاندار فائر پاور ڈسپلے کے ذریعے مشترکہ حربی تیاری اور جنگی صلاحیتوں کا مظاہرہ کیا۔ چیف آف دی نیول اسٹاف ایڈمرل محمد امجد خان نیازی اور کمانڈر رائل سعودی نیول فورسز وائس ایڈمرل فہد بن عبد اللہ الغفیلی نے دونوں ممالک کے بحری اور فضائی یونٹس کی جانب سے لائیو ویپن فائرنگ کا مشاہدہ کیا۔

فائر پاور ڈسپلے میں پہلی بار رائل سعودی ائیر فورس کے ایف 15 ایس/ اے جہاز کی شمولیت سے مشق نسیم البحر 13 کے دوران کئے جانے والے مشترکہ میری ٹائم آپریشنز میں ایک منفرد پہلو کا اضافہ ہوا۔ مشق نسیم البحر 13 میں سمندر میں روایتی خطرات کے خلاف مشترکہ رد عمل کا عملی مظاہرہ شامل تھا۔

پی این ایس شمشیر
پی این ایس شمشیر
سعودی اور امریکی امیر البحر فلیٹ کا معائنہ کر رہے ہیں۔
سعودی اور امریکی امیر البحر فلیٹ کا معائنہ کر رہے ہیں۔

لائیو ویپن فائرنگ کے دوران پاک بحریہ، رائل سعودی بحریہ اور رائل سعودی ائیر فورس کے پلیٹ فارمز نے اپنے متعلقہ اہداف کو کامیابی سے نشانہ بنایا۔ مشق کا مقصد نیول وارفئیر اور میری ٹائم سیکیورٹی آپریشنز کے مختلف پہلووؤں کو مدنظر رکھتے ہوئے دونوں ممالک کی افواج کے مابین مشترکہ آپریشنز کی صلاحیت اور آپریشنل تیاری میں اضافہ تھا۔

ایچ ایم ایس الریاض
ایچ ایم ایس الریاض
مشقوں میں شامل سعودی فوجی
مشقوں میں شامل سعودی فوجی

بعد ازاں دونوں افواج کے سربراہان نے دیگر اعلیٰ حکام کے ہمراہ جوائنٹ فلیٹ ریویو کے دوران پاک بحریہ اور رائل سعودی نیول فورسز کے جہازوں کا سمندر میں معائنہ کیا۔

مشق نسیم البحر ہر دو سال بعد منعقد کی جانے والی آپریشنل مشق ہے جو دو دہائیوں کے دوران پاک سعودی اسٹریٹجک تعلقات اور سمندری خطرات سے نبرد آزما ہونے کے لئے دونوں ممالک کے باہمی تعاون کو فروغ دینے کے عزم کا عملی مظاہرہ ہے۔