’’خوش خبری‘‘:پاکستان کو سعودی عرب سے 3 ارب ڈالر کی رقم موصول ہوگئی:مشیرخزانہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

پاکستان کو سعودی عرب سے تین ارب ڈالرقرض کی رقم مل گئی ہے۔یہ رقم سعودی عرب کے پاکستان کے لیے اقتصادی امدادی پیکج کا حصہ ہے۔ وزیر اعظم پاکستان عمران خان کے مشیربرائے خزانہ شوکت ترین نے ہفتے کے روزایک ٹویٹ میں رقم موصول ہونے کی تصدیق کی ہے۔

واضح رہے کہ پاکستان کو اس وقت بڑھتے ہوئے معاشی چیلنجوں کا سامنا ہے،ملک میں افراطِ زرمیں اضافہ ہورہا ہے،کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ بڑھتا جارہا ہے اورغیرملکی زرمبادلہ کے ذخائراورکرنسی کی قدر میں کمی واقع ہورہی ہے۔

وزیراعظم عمران خان کے مشیرخزانہ شوکت ترین نے ایک ٹویٹ میں کہا ہے کہ ’’میں عزت مآب ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان اور مملکت سعودی عرب کا خیرسگالی کے اس اظہار پر شکریہ ادا کرنا چاہتا ہوں۔‘‘

پاکستان نے سعودی عرب سے اس قرض کے لیے گذشتہ ماہ ایک پیکج پر دست خط کیے تھے۔اس کی شرائط کے تحت یہ قرض 4 فی صد شرح سود پرایک سال کےلیے ہوگا۔

بی ایم اے کیپیٹل کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر سعدہاشمی نے کہا کہ ’’یہ ایک مثبت خبر ہے۔اس سے فاریکس مارکیٹ میں زرمبادلہ کے ذخائراور جذبات دونوں کو تقویت دینے میں مدد ملے گی۔‘‘

سعودی عرب سے قرض کی اس رقم کی ترسیل سے ایک ہفتہ قبل پاکستان نے بین الاقوامی مالیاتی فنڈ(آئی ایم ایف) سے 6 ارب ڈالرکے تعطل کا شکار فنڈنگ پروگرام کی بحالی کے لیے درکاراقدامات سے اتفاق کیا تھا۔

رواں سال کے اوائل سے زیرالتوا جائزہ کی تکمیل سے آئی ایم ایف کے خصوصی ڈرائنگ رائٹس کے تحت قریباً ایک ارب ڈالر پاکستان کے لیے دستیاب ہوں گے جس سے اب تک پاکستان کو ملنے والی مجموعی رقم قریباً3ارب ڈالرتک پہنچ جائے گی۔

پاکستان کے مرکزی بنک نے افراطِ زرکے دباؤ کا مقابلہ کرنے کے لیے بینچ مارک شرح سود 150 بیس پوائنٹس بڑھا کر8.75 فی صد کردی ہے۔نومبر میں افراط زر کی شرح 11.5 فی صد تک پہنچ گئی تھی۔ایک ماہ قبل یہ شرح 9.2 فی صد تھی۔

انٹربنک میں جمعہ کو ایک ڈالر کی قیمت 176.77 پاکستانی روپے رہی تھی۔رواں سال کے آغاز سے ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قدر میں اب تک 11 فی صد سے زیادہ کمی ہوچکی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں