سعودی فنڈبرائےترقی کے پاکستان کے ساتھ 84کروڑ60 لاکھ ڈالرکے دومعاونتی سمجھوتے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

پاکستان نے جی-20 قرضہ سروس معطلی اقدام فریم ورک(ڈی ایس ایس آئی) کے تحت سعودی فنڈ برائے ترقی (ایس ڈی ایف) کے ساتھ 84کروڑ 60لاکھ ڈالر مالیت کے دو سمجھوتوں پر دست خط کیے ہیں۔

پاکستان میں سعودی عرب کے سفیرنواف بن سعید المالکی نے جمعرات کواسلام آباد میں ان سمجھوتوں پردست خطوں کی تقریب میں شرکت کی۔ایس ڈی ایف کے ڈائریکٹرجنرل برائے ایشیا سعودعایض آرالشماری نے تقریب میں فنڈ کی نمائندگی کی۔

یہ رقم مئی 2020 سے دسمبر2021ء تک کی تجرباتی مدت کے دوران میں ادا کی جانا تھی لیکن اب یہ رواں سال سے شروع ہونے والی چھے سال کی مدت میں نیم سالانہ قسطوں میں واپس کی جائے گی۔

سعودی فنڈ برائے ترقی کی جانب سے دیگر دو طرفہ قرض دہندگان ممالک کے ساتھ مل کر کی جانے والی معاونت کی وجہ سے جی-20 ڈی ایس ایس آئی نے مالیاتی موقع فراہم کیا ہے۔اس سے اسلامی جمہوریہ پاکستان کومالیاتی استحکام اور سماجی اقتصادی ضروریات سے نمٹنے میں مدد ملے گی۔

مئی 2020 سے دسمبر2021 تک کی مدت پر محیط ڈی ایس ایس آئی فریم ورک کے تحت معطل اور ری شیڈول کیے گئے قرضوں کی کل رقم تین ارب 68 کروڑ 80 لاکھ (3688 ملین) ڈالربنتی ہے۔

پاکستان پہلے ہی جی-20 ڈی ایس ایس آئی فریم ورک کے تحت اپنے قرضوں کو ری شیڈول کرنے کے لیے 21 دو طرفہ قرض دہندگان کے ساتھ 80 سمجھوتے طے کرچکا ہے۔ ان قرضوں کی کل مالیت دوارب آٹھ کروڑ 80 لاکھ ڈالر بنتی ہے۔

سعودی فنڈ برائے ترقی کے ساتھ طے شدہ سمجھوتوں سے ری شیڈول کی گئی مجموعی رقم دو ارب 93 کروڑ 40 لاکھ(2934 ملین)ڈالر تک پہنچ گئی ہے جبکہ باقی 75 کروڑ 40 لاکھ ڈالر کے لیے مذاکرات جاری ہیں۔توقع ہے کہ رواں مالی سال ہی میں اس رقم کے لیےمتعلقہ دو طرفہ ترقیاتی شراکت داروں کے ساتھ سمجھوتے طے پاجائیں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں