دشمن کی کسی بھی مہم جوئی کا منہ توڑ جواب دیں گے: صدر پاکستان

یومِ پاکستان کے موقع پر مسلح افواج کی مشترکہ پریڈ میں ملک کی دفاعی قوت کا شاندار مظاہرہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

صدر پاکستان ڈاکٹر عارف علوی نے کہا ہے کہ پاکستان اپنی سلامتی اور خودمختاری پر کبھی سمجھوتہ نہیں کرے گا اور کسی بھی مہم جوئی کا فوری اور منہ توڑ جواب دیا جائے گا۔

یوم پاکستان کے موقع پر شکرپڑیاں پریڈ گراؤنڈ میں ہونے والے مسلح افواج کی مشترکہ پریڈ سے خطاب کرتے ہوئے صدر پاکستان نے کہا کہ ہم ایک ذمہ داری ایٹمی قوت ہیں اور تمام ممالک کے ساتھ امن چاہتے ہیں، ان کی خودمختاری کا احترام کرتے ہیں اور پر امن بقائے باہمی کے اصولوں پر قائم ہیں۔

انہوں نے کہا کہ میں یہ بات واضح کر دوں کہ ہم اپنی سلامتی اور خودمختاری پر کبھی کوئی سمجھوتہ نہیں کریں گے اور کسی بھی مہم جوئی کا فوری اور بھرپور جواب دیا جائے گا۔

عارف علوی نے کہا کہ جنوبی ایشیا میں عدم استحکام کی بڑی وجہ ہمسایہ ملک کے توسیع پسندانہ عزائم اور کشمیر پر اس کا غیر قانونی قبضہ ہے۔

صدر مملکت نے کہا کہ ہماری خواہش کے او آئی سی کو مزیدمستحکم اور مؤثر بنایا جائے، اس وقت دنیائے اسلام کو آزمائشوں کا سامنا ہے، فلسطین، بھارتی مقبوضہ کشمیر میں عوام پر جبر و تشدد کیا جاتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ دنیا میں اسلاموفوبیا کی بڑھتی لہر نے مسلمانوں کو خطرات سے دوچار کر دیا ہے اور ایک غیر یقینی کیفیت میں ہیں، اسلاموفوبیا کو عالمی سطح پر روکنے کے لیے اقوامِ متحدہ میں او آئی سی کی جانب سے پاکستان کی پیش کردہ قرار داد کی منظوری دی۔

صدر کا کہنا تھا کہ اس قرار داد میں اس بات کا اعادہ کیا گیا ہے کہ اسلاموفوبیا، ناموس رسالت اور مذہب کی توہین اور مسلمانوں کے خلاف نفرت انگیز تحریر و تقریر دنیا کے سامنے ایک بہت بڑا چیلنج ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ اب ہر سال 15 مارچ کو اسلاموفوبیا سے مقابلے کا دن بنایا جائے گا اور دنیا اس بات کو یقینی بنائے گی کہ اسلاموفوبیا کی کیفیت کو ہمیشہ کے لیے ختم کیا جائے۔

عارف علوی نے کہا کہ او آئی سی کے اجلاس دنیائے اسلام کو درپیش مسائل کے حل اور مسلم امہ کے اتحاد کے لیے ایک بہترین موقع ہے، ہمیں یقین ہے باہمی اتحاد اور تعاون سے تمام چیلنجز کا مقابلہ کیا جاسکتا ہے۔

ہمیں یہ بات رکھنی چاہیے کہ حصول پاکستان کا مقصد ایک ایسی فلاحی ریاست کا قیام تھا جو اسلامی اصولوں ایک اعتدال پسند اور روادار معاشرے کا عملی نمونہ پیش کرے، مسلمانوں کے ساتھ ساتھ اقلیتوں کے جان و مال کا تحفظ اور مکمل مذہبی آزادی حاصل ہو۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں