عمران خان نے سابق چیف جسٹس گلزاراحمد کونگران وزیراعظم نامزدکردیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

پاکستان کے سبکدوش وزیراعظم عمران خان نے عدالتِ عظمیٰ کے سابق چیف جسٹس گلزاراحمد کو نگران وزیر اعظم کے عہدے کے لیے نامزد کیا ہے۔

سبکدوش وزیراطلاعات فواد چودھری نے سوموار کو ایک بیان میں کہا ہے کہ عمران خان نے سابق چیف جسٹس کو نامزد کرنے کا فیصلہ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی کورکمیٹی کی منظوری کے بعد کیا ہے۔

سبکدوش وزیراعظم کی جانب سے صدرکو لکھے گئے خط میں کہا گیا ہے کہ’’میں پاکستان کے سابق چیف جسٹس جسٹس ریٹائرڈ جسٹس گلزاراحمد کے نام کی تجویز پیش کرتا ہوں۔انھیں نگران وزیراعظم مقررکرنے پرغور کیا جائے‘‘۔

ان کی نامزدگی صدرڈاکٹرعارف علوی کی جانب سے وزیراعظم اور تحلیل شدہ قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف شہباز شریف کو لکھے گئے خط کے بعد کی گئی ہے۔اس خط میں آئین کے آرٹیکل 224-اے(1) کے تحت قائدایوان اور قائدحزب اختلاف کو نگران وزیراعظم کے طور پر تقرر کے لیے مناسب افراد کے نام تجویز کرنے کا کہا گیا تھا۔

یہ خط قومی اسمبلی کے ڈپٹی اسپیکرکی جانب سے وزیر اعظم عمران خان کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک کی اجازت نہ دینے کے ایک دن بعد سامنے آیا ہے۔ صدر نے اتوار کوعمران خان کے مشورے پر پارلیمان کے ایوان زیریں کو تحلیل کردیا تھا۔اس کے ساتھ ہی وفاقی کابینہ بھی تحلیل ہوگئی تھی۔

صدر نے کہا کہ وزیر اعظم عمران آئین کے آرٹیکل 224-اے(4) کے تحت نگران وزیراعظم کے تقررتک اپنا عہدہ برقرار رکھیں گے۔

صدرعلوی نے خط میں کہا ہے کہ اگر وہ قومی اسمبلی کی تحلیل کے تین دن کے اندرنگران وزیراعظم کے تقررپر متفق نہیں ہوتے تو وہ دونامزد افراد کے نام اسپیکر کی تشکیل کردہ کمیٹی کو بھیج یں گے۔اس کمیٹی یں سبکدوش ہونے والے قومی اسمبلی یا ایوان بالا سینیٹ کے آٹھ ارکان یا دونوں میں سے ارکان شامل ہوں گے۔اس میں سبکدوش حکومت اور اپوزیشن کی یکساں نمائندگی ہوگی۔

تاہم، پاکستان مسلم لیگ نواز کے صدر میاں شہبازشریف نے اعلان کیا ہے کہ وہ اس ’’غیرقانونی ‘‘عمل میں حصہ نہیں لیں گے۔انھوں نے کہا کہ صدر اور وزیر اعظم نے آئین اورقانون توڑا ہے۔اس لیے وہ اپوزیشن سے کیسے رجوع کرسکتے ہیں۔

جسٹس گلزار احمد:پاکستان کے 27 ویں چیف جسٹس

جسٹس گلزاراحمد نے 21 دسمبر 2019 کو پاکستان کے 27 ویں چیف جسٹس کی حیثیت سے عہدے کا حلف اٹھایا تھا اور انھوں نے فروری 2020ءتک چیف جسٹس کی حیثیت سے خدمات انجام دیں۔

وہ 2 فروری 1957 کوکراچی میں ایک ممتاز وکیل نور محمد کے خاندان میں پیدا ہوئے۔سپریم کورٹ کی ویب سائٹ کے مطابق انھوں نے ابتدائی تعلیم شہر کے گلستان اسکول سے حاصل تھی۔ اس کے بعد انھوں نے گورنمنٹ نیشنل کالج کراچی سے بیچلر آف آرٹس کی ڈگری حاصل کی۔اس کےبعدانھوں نے ایس ایم لا کالج کراچی سے قانون کی ڈگری حاصل کی۔

انھوں نے 18 جنوری 1986 کوایڈووکیٹ کے طور پر اپنا اندراج کرایا تھا اور 4 اپریل 1988 کو ہائی کورٹ کے وکیل کی حیثیت سے کام شروع کیا تھا۔اس کے بعد وہ 15 ستمبر2001 کو سپریم کورٹ کے وکیل بن گئے۔

جسٹس گلزاراحمد سال 1999-2000 کے لیے کراچی میں سندھ ہائی کورٹ بارایسوسی ایشن کے اعزازی سیکرٹری منتخب ہوئے تھے۔انھوں نے وکالت کے دوران میں زیادہ تر سول کارپوریٹ مقدمات کی پیروی کی اور متعدد کثیرقومی اور مقامی کمپنیوں، بینکوں اور مالیاتی اداروں کے قانونی مشیر کے طور پر خدمات انجام دیں۔

جسٹس گلزاراحمد کو27 اگست 2002ء کو سندھ ہائی کورٹ (ایس ایچ سی) کا جج مقررکیا گیا تھا۔ان کا 14 فروری 2011 کو ہائی کورٹ کے ’’سینیرپیونی جج‘‘ کے طور پر نوٹی فیکیشن جاری کیا گیا تھا اور اسی سال کے آخر میں 16 نومبر کوانھیں ترقی دے کرعدالتِ عظمیٰ کا جج مقرر کیا گیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں