وزیر اعظم شہباز شریف سے اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گوتیریس کی ملاقات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

وزیر اعظم محمد شہباز شریف سے اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گوتیریس نے جمعہ کو ملاقات کی۔ ملاقات میں وفاقی کابینہ کے اراکین بھی موجود تھے۔

اس موقع پر وزیر اعظم نے یو این سیکریٹری جنرل کو بتایا کہ پاکستان کو عام حالات کے تناسب سے بڑھ کر سیلاب کا سامنا ہے جو کہ موسمیاتی طور پر پیدا ہونے والی قدرتی آفت کا خوفناک مظہر ہے۔

انہوں نے حکومت کی جانب سے اقوام متحدہ کے اداروں، بین الاقوامی برادری اور انسانی ہمدردی کی تنظیموں کے ساتھ مل کر ملک بھر میں 3 کروڑ 30 لاکھ سے زیادہ متاثرین تک پہنچنے کے لیے وسیع پیمانے پر کی جانے والی امدادی کارروائیوں کا خاکہ پیش کیا۔

وزیراعظم نے کہا کہ سیکریٹری جنرل گوتیریس کا دورہ پاکستان اس نازک وقت میں پاکستانی عوام کے ساتھ بھرپور یکجہتی کا مظہر ہے۔ وزیراعظم نے پاکستان کے فلڈ رسپانس پلان کی فنڈنگ کے لیے اقوام متحدہ کی 160 ملین ڈالر کی ”فلیش اپیل” سمیت بین الاقوامی امداد کو متحرک کرنے کے لیے سیکریٹری جنرل کی بھرپور حمایت اور وکالت کو سراہا۔ انہوں نے سیکریٹری جنرل کی جانب سے ان سیلابوں کے موسمیاتی تبدیلی کے اثرات سے تعلق کو اجاگر کرنے کے پیغام کو سراہا۔

وزیراعظم نے کہا کہ سیکریٹری جنرل کی قیادت اور بروقت مداخلت نے تباہ کن سیلاب سے پیدا ہونے والے سنگین چیلنجوں پر عالمی سطح پر آگاہی میں مدد دی۔ وزیراعظم نے یاد دلایا کہ عالمی کاربن کے ایک فیصد سے بھی کم اخراج کے ساتھ پاکستان عالمی حدت کے لیے سب سے کم ذمہ داروں میں شامل ہے، اس کے باوجود یہ موسمیاتی تبدیلی سے سب سے زیادہ متاثر ہونے والے ٹاپ 10 ممالک میں شامل ہے۔

وزیراعظم نے اس بات پر زور دیا کہ ”موسمیاتی انصاف” کے جذبے کے تحت پاکستان عالمی برادری خصوصاً صنعتی ممالک کی طرف سے اس موسمیاتی آفت سے نمٹنے اور بحالی و تعمیرنو کے لیے تعاون کا حقدار ہے۔ دونوں رہنماؤں نے سیلاب سے متاثرہ آبادی کی بحالی کے مرحلے اور سیلاب سے تباہ ہونے والے علاقوں کی تعمیرنو کے لیے پاکستان کے منصوبوں پر بھی تبادلہ خیال کیا۔

وزیراعظم نے اقوام متحدہ کے نظام اور دیگر بین الاقوامی شراکت داروں کی مناسب مدد کے ساتھ موافقت اور تخفیف کے مختلف منصوبوں سمیت مستقبل میں موسمیاتی خطرات کے خلاف لچک پیدا کرنے کے پاکستان کے عزم کو دہرایا۔ پاکستان کے ساتھ اپنی طویل وابستگی کو یاد کرتے ہوئے سیکریٹری جنرل نے پاکستانی عوام کے لیے اپنے بے پناہ جذبات کا اظہار اور تعریف کرتے ہوئے کہا کہ وہ پاکستانی عوام کی سخاوت کے ساتھ ساتھ اپنے ہم وطنوں کی مدد کرنے اور کئی دہائیوں تک لاکھوں افغان مہاجرین کی میزبانی میں ان کی فراخدلی کے گواہ ہیں۔

انہوں نے کہا کہ وہ سیلاب کی بڑے پیمانے پر تباہی اور اس کے اثرات سے پریشان ہیں۔ انہوں نے بین الاقوامی امداد کو متحرک کرنے سمیت پاکستان کو مکمل حمایت اور عزم کا یقین دلایا۔ سیکریٹری جنرل نے اس بات پر زور دیا کہ یہ محض یکجہتی کا نہیں بلکہ انصاف کا سوال ہے۔ انہوں نے کہا کہ بحالی اور تعمیر نو کے لیے درکار بڑے پیمانے پر تعاون کے علاوہ، موسمیاتی تبدیلی کے مسئلے کو جلد، سنجیدگی اور ذمہ داریوں کے ساتھ حل کرنے کی ضرورت ہے جس کے وہ مستحق ہیں۔

سیکریٹری جنرل گوتیریس ملک میں شدید بارشوں اور سیلاب کے تناظر میں یکجہتی کے لیے پاکستان کے دو روزہ دورے پر ہیں۔ وزیراعظم اور سیکریٹری جنرل نے بعدازاں نیشنل فلڈ رسپانس اینڈ کوآرڈینیشن سینٹر میں بریفنگ میں شرکت کی۔ سیکریٹری جنرل اپنے دورے کے دوران سیلاب سے سب سے زیادہ متاثر ہونے والے علاقوں کا بھی دورہ کریں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں