صوبہ خیبرپختونخوا:پولیس کی کارروائی میں کالعدم ٹی ٹی پی کے دوکمانڈرہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

شمال مغربی سرحدی صوبہ خیبرپختونخوا میں پولیس نے ایک کارروائی میں کالعدم تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) کے دو کمانڈروں کو ہلاک کردیا ہے۔

ریجنل پولیس افسرمحمد علی گنڈاپور نے بتایا ہے کہ ہلاک ہونے والے ٹی ٹی پی کے جنگجو پانچ پولیس افسروں کے قتل کے سلسلے میں مطلوب تھے اور سکیورٹی چوکیوں پر حملوں میں بھی ملوّث تھے۔حکومت نے ان دونوں افراد کی گرفتاری میں معاونت پر18لاکھ 87 ہزار روپے(7,259 ڈالر) کا انعام مقرر کررکھا تھا۔

پولیس نے ضلع صوابی کے گاؤں ہنڈ میں یہ کارروائی کی ہے۔اسی انٹیلی جنس آپریشن کے دوران میں پولیس نے چار جنگجوؤں کو گرفتار کرلیا ہے اور ان کے قبضے سے بارود، دستی بم، الیکٹرانک ڈیٹونیٹرز اور کلاشنکوف رائفلیں برآمد کرلی ہیں۔

یہ کارروائی صوبائی دارالحکومت پشاورمیں پولیس اور سرکاری کمپاؤنڈ کے اندر ایک مسجد میں بم دھماکے کے چند روز بعد کی گئی ہے۔دہشت گردی کے اس واقعہ میں 101 افراد جاں بحق اور225 زخمی ہوگئے تھے۔ یہ بم حملہ شورش زدہ صوبے میں گذشتہ برسوں کے دوران میں ہونے والے مہلک ترین حملوں میں سے ایک تھا۔

پاکستانی سکیورٹی فورسزنے خاص طور پرصوبہ خیبر پختونخوا میں کالعدم کالعدم تحریک طالبان کی طرف سے پُرتشدد حملوں میں اضافے کے بعد جنگجوؤں کے خلاف اپنی کارروائیاں تیز کردی ہیں۔ٹی ٹی پی نے نومبر میں حکومت کے ساتھ جنگ بندی ختم کرتے ہوئے اپنے جنگجوؤں کو ملک بھرمیں حملے کرنے کا حکم دیا تھا۔اس کے بعد سے ملک کے مختلف شہروں میں متعدد بم دھماکے اور دہشت گردی کے بڑے واقعات ہوچکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں