چیئرمین نیب آفتاب سلطان نے استعفی دے دیا، وزیر اعظم نے منظور کر لیا

آفتاب سلطان کو مختلف معاملات پر تحفظات تھے، کام میں مداخلت پر مستعفی ہونے کا فیصلہ کیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

چیئرمین نیب آفتاب سلطان نے استعفیٰ دے دیا۔ وزیر اعظم پاکستان میاں محمد شہباز شریف نے چیئرمین نیب کا استعفی منظور کر لیا ہے۔ چیئرمین نیب آفتاب سلطان کو مختلف معاملات پر تحفظات تھے، چیئرمین نیب نے کام میں مداخلت پر مستعفی ہونے کا فیصلہ کیا۔

چیئرمین نیب آفتاب سلطان نے وزیر اعظم سے ملاقات میں کہا کہ وہ اس ماحول میں کام نہیں کر سکتے۔

ذرائع کے مطابق آفتاب سلطان نے کسی کی خواہش پر کام کرنے سے انکار کر دیا تھا، وہ نہیں چاہتے تھے کہ وہ سابق چیئرمین نیب جاوید اقبال کی طرح کا کردار ادا کریں۔ ذرائع کا مزید کہنا ہے کہ آفتاب سلطان پر کچھ گرفتاریوں کے لیے دباؤ تھا لیکن انہوں نے گرفتاریوں سے انکار کر دیا۔

دریں اثناء نیب ہیڈکوارٹرز میں الوداعی خطاب کے دوران آفتاب سلطان کا کہنا تھا کہ چیئرمین کے عہدے سے مستعفی ہونے کا فیصلہ کیا ہے، بہت خوش اور مطمئن ہوں کہ اپنے اصولوں پر کاربند ہوں اور کسی دباؤ کے سامنے نہیں جھکا۔

آفتاب سلطان نے کہا کہ اپنی زندگی اور پیشہ ورانہ کیریئر میں قانون کے مطابق کام کرنے کی کوشش کی اور اپنے اصولوں پر کبھی سمجھوتہ نہیں کیا، میں کسی کے خلاف جھوٹا مقدمہ نہیں چلا سکتا، نہ ہی کسی کے خلاف قائم ریفرنس محض اس بنیاد پر بند کرسکتا ہوں کہ مجرم کسی بااثر شخص کا رشتہ دار ہے۔

آفتاب سلطان کا کہنا تھا کہ ہمارا آئین ہمارے تمام مسائل کا حل فراہم کرتا ہے، آئین پر عمل نہ کرنے کی وجہ سے آج ہم سیاسی اور معاشی بحران کا شکار ہیں، اعلیٰ اخلاقی اقدار اور قانون کی حکمرانی کے اصولوں کو برقرار رکھنے کے لیے نیب کے نوجوان افسران پر مکمل اعتماد ہے۔

خیال رہے کہ آفتاب سلطان نے جاوید اقبال کی ریٹائرمنٹ کے بعد جولائی 2022 کو نیب کی سربراہی سنبھالی تھی۔ واضح رہے کہ چیئرمین نیب آفتاب سلطان کا تعلق پولیس سروس پاکستان سے ہے اور وہ گریڈ 22 کے آفیسر ہیں، آفتاب سلطان ڈی جی آئی بی سمیت دیگر اہم عہدوں پر بھی تعینات رہے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں