داعش نے سبی میں پولیس کی گاڑی پر بم حملے کی ذمہ داری قبول کرلی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

شدت پسند تنظیم ’داعش‘نے پیر کے روز پاکستان کے صوبہ بلوچستان میں پولیس کی گاڑی کو نشانہ بنانے والے خودکش حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔ دو روز قبل ہونے والے اس حملے میں 9 پولیس اہلکار شہید اور 16 زخمی ہوئے تھے۔

’داعش‘ کی پروپیگنڈہ ایجنسی ’اعماق‘ نے تنظیم کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان شائع کیا ہے جس میں کہا ہے کہ بلوچستان میں پولیس بس پرحملہ داعش کے ایک جنگجو نے کیا۔

پیر کو جنوب مغربی پاکستان میں ان کی گاڑی کو نشانہ بنانے والے خودکش حملے میں کم از کم 9 پولیس اہلکار جاں بحق اور 16 دیگر زخمی ہو گئے۔

خیال رہے کہ ایک بس پولیس اہلکاروں کو لے نے والی بس کو اس وقت نشانہ بنایا گیا جب "سبی" میں ایک لوک میلے میں اپنے فرائض سرانجام دینے کے بعد واپس جا رہے تھے۔

حملے کے فوراً بعد سکیورٹی فورسز نے جائے وقوعہ کو گھیرے میں لے لیا اور متاثرین کو قریبی اسپتالوں میں منتقل کرنے اور اس کے حالات کی چھان بین شروع کردی۔

مقامی پولیس کے ایک سینیر اہلکار عبدالحئی عامر نے بتایا کہ خودکش حملہ آور موٹر سائیکل پر سوار تھا اور پیچھے سے ٹرک سے ٹکرا گیا۔

یہ حملہ صوبہ بلوچستان کے دارالحکومت کوئٹہ سے 120 کلومیٹر جنوب مشرق میں ضلع کاشی میں ہوا۔

اسی علاقے میں گذشتہ ماہ بارکھان کے علاقے میں ایک مشہور بازار میں دھماکہ خیز مواد پھٹنے سے 5 افراد ہلاک اور 16 زخمی ہو گئے تھے۔

بلوچستان کے علاقے میں سکیورٹی فورسز اور نسلی اقلیتوں کو نشانہ بنانے والے حملوں اور بم دھماکوں میں اضافہ دیکھا جا رہا ہے، کیونکہ اس خطے میں کئی علیحدگی پسند اور دہشت گرد مسلح گروہ سرگرم ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں