امریکی کانگریس مین کا پاکستان میں قانون کی حکمرانی اور جمہوریت کے فروغ پر زور

متنازع بریڈ شرمین نے عمران خان کے ساتھ رابطے کے وقت پاکستان میں طاقت کے استعمال پر تشویش کا اظہار بھی کیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی کانگریس کی خارجہ امور کمیٹی کے سینئر رکن بریڈ شرمین نے مطالبہ کیا ہے کہ صحافی ارشد شریف اور ظلِ شاہ کی اموات کی شفاف تحقیقات کی جائیں۔

بریڈ شرمین نے امریکی ڈیموکریٹ پارٹی کے رکن ڈاکٹر آصف محمود سے ملاقات اور چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان سے ٹیلی فون پر گفتگو کے بعد وڈیو بیان بھی جاری کیا ہے جس میں انہوں نے کہا ہے کہ ڈاکٹر آصف محمود پاکستان میں حالیہ پیش رفت پر بات کرنے کے لیے میرے گھر آئے۔

امریکی کانگریس مین نے کہا ہے کہ عمران خان سے فون پر بات ہوئی ہے اور خوشی ہے کہ سابق وزیرِ اعظم نے مسائل پر گفتگو کی۔ امریکی کانگریس کے رکن کا کہنا ہے کہ حال ہی میں پاکستان میں ہونے والے دہشت گردی کے واقعات پر امریکا میں تشویش ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ امریکا پاکستان میں جمہوریت اور جمہوری حقوق کی مکمل حمایت کرتا ہے۔ بریڈ شرمین نے کہا ہے کہ شخصی آزادیوں پر قدغن کسی صورت نہیں ہونی چاہیے۔ امریکی کانگریس کی خارجہ امور کمیٹی کے سینئر رکن نے عمران خان کی تقریر پر پابندیوں اور سیاسی سرگرمیوں کر روکنے پر بھی تشویش کا اظہار کیا ہے۔

بریڈ شرمین کون ہیں؟

واضح رہے کہ امریکی کانگریس مین بریڈ شرمین ماضی میں اسرائیل کے تحفظ کی خاطر صہیونی ریاست کو میزائل شکن پروگرام آئرن ڈوم کی فنڈنگ کروائی۔ بریڈ شرمین اسرائیل کے مسجد اقصیٰ پر قبضے کے پراجیکٹ کا سپانسر ہے، وہ کھلے عام فلسطینیوں کے قتل کے جواز پیش کرنے کی شہرت بھی رکھتے ہیں۔

امریکی کانگریس مین شرمین بریڈ نے امریکہ میں پاکستان میں متعارف کرائے جانے والے توہین رسالت قوانین کے خاتمے کی مہم چلائی اور تاحال اس مذموم مہم کی قیادت کر رہا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں