جسٹس مسرت ہلالی نے بطور قائمقام چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ کے عہدے کا حلف اٹھا لیا

جسٹس مسرت ہلالی کی بطور مستقل چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ تعیناتی کی منظوری ابھی جوڈیشل کمیشن آف پاکستان کی جانب سے نہیں دی گئی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

جسٹس مسرت ہلالی نے بطور قائمقام چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ کے عہدے کا حلف اٹھا لیا۔ گورنر خیبر پختونخوا غلام علی نے جسٹس مسرت ہلالی سے قائم مقام چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ کا حلف لے لیا ہے۔ جسٹس مسرت ہلالی پشاور ہائی کورٹ کی تاریخ میں چیف جسٹس کے عہدہ پر فائز ہونے والی پہلی خاتون جج بن گئی ہیں۔

حلف برداری کی تقریب گورنر ہاؤس میں منعقد ہوئی جس میں نگران وزرا، پشاور ہائی کورٹ کی ججز، چیف سیکریٹری کے پی، آئی جی اور دیگر حکام نے شرکت کی۔

جسٹس مسرت ہلالی کی بطور مستقل چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ تعیناتی کی منظوری ابھی جوڈیشل کمیشن آف پاکستان کی جانب سے نہیں دی گئی۔ جسٹس مسرت ہلالی چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ کے عہدے کا حلت اٹھانے والی پہلی خاتون جج ہیں۔ جسٹس مسرت ہلالی کو سپریم کورٹ آف پاکستان کا جج تعینات نہ کیا گیا تووہ بطور چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ رواں سال سات اگست کو اپنے عہدے سے ریٹائرڈ ہو جائیں گی۔

واضح رہے کہ دو روز قبل سابق چیف جسٹس قیصر رشید خان اپنی 62 سالہ آئینی مدت ملازمت مکمل کرنے کے بعد بطور چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ اپنے عہدے سے ریٹائرڈ ہو گئے تھے جبکہ صرف ایک دن کے لئے چیف جسٹس بننے والے جسٹس روح الامین خان بھی گذشتہ روز اپنی 62 سالہ آئینی مدت ملازمت مکمل کرنے کے بعد اپنے عہدے سے ریٹائرڈ ہو گئے تھے۔

وزارت قانون کی جانب سے جاری اعلامیہ کے مطابق جوڈیشل کمیشن جب تک مستقل چیف جسٹس کی تقرری نہیں کرتا اس وقت تک جسٹس مسرت ہلالی قائمقام چیف جسٹس کے فرائض انجام دیں گی۔

جسٹس مسرت ہلالی کون ہیں؟

جسٹس مسرت ہلالی کا تعلق خیبرپختونخوا کے ضلع مالاکنڈ سے ہے۔ ابتدائی تعلیم گاؤں سے حاصل کی جبکہ قانون کی ڈگری خیبر لا کالج آف پشاور سے حاصل کی۔ جسٹس مسرت ہلالی نے 1983 میں وکالت کا آغاز کیا۔ سال 1988 میں ہائی کورٹ اور 2006 سپریم کورٹ کا لائسنس حاصل لیا۔

1988 میں جسٹس مسرت ہلالی پشاور بار کی پہلی خاتون سیکریٹری منتخب ہوئیں۔ وہ 1992 سے 1994 تک بار کی نائب صدر رہی جبکہ 1997 میں دوسری بار سیکریٹری منتخب ہوئیں۔ جسٹس مسرت ہلالی سپریم کورٹ بار ایسویسی ایشن کے ایگزیگٹیوممبر بھی رہ چکی ہیں۔

جسٹس مسرت ہلالی سال 2001 بطور ایڈیشنل ایڈوکیٹ جنرل خیبر پختونخوا تعیناتی ہوئیں۔ وہ چیئرپرسن انوائرمنٹل پروٹیکش ٹربیونل اور بطور صوبائی محتسب بھی خدمات انجام دے چکی ہیں۔ یاد رہے جسٹس مسرت ہلالی مارچ 2013 کو پشاور ہائی کورٹ کی ایڈیشنل جج تعینات ہوئیں اور پھر 2014 میں ہائیکورٹ کی مستقل جج بن گئیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں