پاکستانی مردوں پر ہرزہ سرائی افسوسناک، خطرناک اور امتیازی ہے: ترجمان دفتر خارجہ

مسجد اقصیٰ میں اسرائیل کی کھلی جارحیت پر پاکستان کی مذمت، اسرائیل سے اسلام آباد کے کوئی تجارتی وسفارتی رابطے نہیں: زہرا بلوچ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

پاکستان کے دفتر خارجہ کی ترجمان ممتاز زہرا بلوچ نے کہا ہے کہ برطانوی وزیر داخلہ سویلا بریورمین کا بیان خطرناک رجحانات کو فروغ دے گا۔ بدھ کو ہفتہ وار پریس بریفنگ سے خطاب میں ترجمان دفتر خارجہ نے برطانوی وزیر داخلہ کے پاکستانی مردوں سے متعلق بیان پر اظہار تشویش کیا۔ ترجمان نے ردعمل میں کہا کہ پاکستان جمہوری اقدار پر یقین رکھتا ہے۔

ترجمان نے کہا کہ برطانوی وزیر داخلہ سویلا بریورمین کی پاکستانی مردوں پر ہرزہ سرائی افسوسناک ہے۔ برطانوی وزیر کا بیان خطرناک اور امتیازی ہے۔ بیان کا مقصد پاکستانیوں کے ساتھ مختلف سلوک برتنا ہے۔

بیان کا پس منظر

خیال رہے کہ منگل کو برطانوی وزیر داخلہ سویلا بریورمین کا ایک بیان سامنے آیا جس میں انہوں نے برطانوی پاکستانی مردوں پر جنسی استحصال میں ملوث ہونے کا الزام عائد کیا۔

’سکائی نیوز‘ کو دیے گئے ایک انٹرویو میں سنیچر کو سویلا بریورمین کا کہنا تھا کہ ’ہم نے ایک پریکٹس دیکھی ہے جہاں کمزور سفید فام انگریز لڑکیاں جو کبھی بہبود کے مراکز میں ہوتی ہیں یا جو کبھی مشکل حالات میں ہوتی ہیں انہیں برطانوی پاکستانی مردوں کے گروہوں کی جانب سے نشے کا نشانہ بنایا جاتا ہے، ریپ کیا جاتا ہے اور نقصان پہنچایا جاتا ہے۔‘

برطانوی وزیر داخلہ نے یہ بیان ایک انٹرویو کے دوران دیا جس میں بچوں کے جنسی استحصال کو روکنے سے متعلق منصوبوں پر ان سے سوالات پوچھے جا رہے تھے۔ ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ برطانیہ میں مقیم پاکستانی مردوں کے ’ثقافتی اقدار برطانوی اقدار سے متصادم‘ ہیں۔

مسجد اقصیٰ میں اسرائیلی جارحیت پر پاکستان کی مذمت

پاکستانی دفتر خارجہ کی ترجمان ممتاز زہرا بلوچ نے نیوز بریفنگ کے دوران ’مسجد اقصی میں اسرائیلی تشدد کی شدید مذمت کرتے کرتے ہوئے کہا کہ مسجد اقصی میں اسرائیلی کارروائیوں سے دنیا بھر میں مسلمانوں کو تکلیف پہنچی ہے۔‘

انہوں نے واضح کیا ہے کہ ’پاکستان کے اسرائیل کے ساتھ سفارتی وتجارتی تعلقات نہیں ہیں اور اسرائیل کے حوالے سے پاکستان کی پالیسی میں کوئی تبدیلی نہیں آئی ہے۔‘

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں