کراچی، گارمنٹس فیکٹری میں آگ لگنے سے چار فائر فائٹرز جاں بحق

پولیس کے مطابق آگ لگنے سے فیکٹری کی عمارت منہدم ہو گئی۔ ریسکیو اہلکاروں کے بقول اس واقعے میں بارہ افراد زخمی بھی ہوئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

کراچی میں ایک گارمنٹس فیکٹری میں بڑے پیمانے پر آگ لگنے سے آگ بجھانے والے عملے کے چار اہلکار جان بحق اور تقریباً ایک درجن دیگر افراد زخمی ہو گئے۔

پولیس کے مطابق نیو کراچی کے سیکٹر بی-16 میں واقع ایک نجی بیڈ شیٹ کمپنی میں بدھ کو آگ بھڑک اٹھی تھی جو جمعرات کی صبح تک شدت اختیار کر گئی۔ عمارت پر لگی آگ پر قابو پانے کے بعد عمارت کی کولنگ کا عمل جاری تھا جس کے دوران عمارت منہدم ہو گئی۔

اس آگ کا سبب فوری طور پر معلوم نہیں ہو سکا۔ اس سے پہلے فیکٹری سے اچانک سرمئی دھواں اٹھنے لگا تھا اور عمارت کے گرنے تک فائر فائٹرز آگ پر قابو پا چکے تھے۔ ریسکیو اہلکاروں نے فیکٹری کے ملبے سے اس حادثے میں ہلاک ہونے والے فائر فائٹرز کی لاشیں نکال لیں۔

حکام نے بتایا کہ آگ بجھانے والی کئی گاڑیوں کو شہر کے ایک صنعتی علاقے میں جائے وقوعہ پر روانہ کیا گیا، جہاں کئی فیکٹریاں واقع ہیں۔ افسران ایک ملحقہ عمارت میں آگ کے اثرات کا بھی جائزہ لے رہے ہیں۔

وزیر اعظم شہباز شریف نے فائر فائٹرز کی ہلاکتوں پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے انہیں ''شہید‘‘ قرار دیا، جو دوسروں کی جانیں بچانے کی کوشش میں مارے گئے۔ اپنے ایک بیان میں وزیر اعظم نے متاثرین کے اہل خانہ سے تعزیت کا اظہار کیا۔ وزیر اعظم نے حکام کو مستقبل میں ایسے واقعات سے بچنے کے لیے حکمت عملی تیار کرنے کا حکم دیا۔

کراچی میں اس قسم کے واقعات عام ہیں۔ اگست 2021ء میں کراچی کی ایک کیمیکل فیکٹری میں آگ لگنے سے کم از کم دس افراد ہلاک ہو گئے تھے۔ اس طرح کے ایک اور مہلک ترین واقعے میں 2012 ء میں ایک گارمنٹس فیکٹری میں آگ لگنے کے بعد وہاں پھنسے دو سو ساٹھ افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں