جنگی قابلیت پر سابق آرمی چیف کا بیان درست پیش نہیں کیا گیا: آئی ایس پی آر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

پاکستان کی فوج نے کہا ہے کہ سابق آرمی چیف کے ملکی فوج کی جنگی صلاحیت اور تیاریوں کے حوالے سے بیان کو سیاق و سباق سے ہٹ کر پیش کیا گیا ہے۔

جمعے کو ایک بیان میں فوج کے شعبہ تعلقات عامہ ’’آئی ایس پی آر‘‘ نے کہا کہ حال ہی میں پاکستان آرمی کی انوینٹری میں موجود بعض ہتھیاروں کے نظام کی حالت کے پیش نظر اس کی جنگی قابلیت کے بارے میں میڈیا میں بحث ہوئی۔

’اس حوالے سے پاکستان کے مستقبل کو لاحق خطرے کے بارے میں سابق آرمی چیف کے خیالات، جو انھوں نے ایک آف دی ریکارڈ انٹرایکٹیو سیشن میں میڈیا کے نمائندوں کے ساتھ شیئر کیے، اُن کو سیاق و سباق سے ہٹ کر نقل کیا گیا۔‘

آئی ایس پی آر کے مطابق ’فوج پاکستان کے عوام کو یقین دلاتی ہے کہ ہم نے ہمیشہ اپنی آپریشنل تیاریوں اور انتہائی جنگی صلاحیت پر فخر کیا اور کرتے رہیں گے۔‘

بیان میں کہا گیا ہے کہ ’پاکستان کی مسلح افواج نے ہمیشہ مادر وطن کے دفاع کے لیے اپنے ہتھیاروں، ساز وسامان اور جنگی وسائل سے بھرپور انسانی وسائل کو ہمیشہ تیار رکھا ہے اور تیار رہے گی۔‘

چند دن قبل صحافی و اینکر پرسن حامد میر نے ایک ٹیلی ویژن ٹاک شو میں سابق آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ سے صحافیوں کی ملاقات کا احوال بیان کرتے ہوئے کچھ خدشات ظاہر کیے تھے جو اُن کے مطابق فوج کے سابق سربراہ نے ظاہر کیے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں