عزت صرف ایک ادارے کی نہیں، ہر شہری کی ہونی چاہیے: عمران خان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے ایک مرتبہ پھر اپنی توپوں کا رخ پاک فوج کی جانب کرتے ہوئے کہا ہے کہ ’عزت صرف ایک ادارے کی نہیں ہر شہری کی ہونی چاہیے اور جو ادارہ اپنی کالی بھیڑوں کے خلاف کارروائی کرتا ہے وہ مضبوط ہوتا ہے‘۔

اسلام ہائی کورٹ میں پیشی کے لئے لاہور سے روانگی سے قبل سابق وزیراعظم عمران خان نے ایک ویڈیو پیغام جاری کیا جس میں انہوں نے کہا کہ ’آئی ایس پی آر نے بیان دیا ہے کہ میں نے فوج کی توہین کر دی، میں نے انٹیلی جنس افسر کا نام لیا جس نے مجھے دو بار قتل کرنے کی کوشش کی‘۔

انہوں نے کہا ’عزت ایک ایک ادارے کی نہیں، عزت قوم کے سب شہریوں کی ہونی چاہیے۔ میں اس وقت ملک کی سب سے بڑی سیاسی پارٹی کا سربراہ ہوں، 50 سال سے لوگ مجھے جانتے ہیں۔ مجھے جھوٹ بولنے کی ضرورت نہیں ہے، اس آدمی نے مجھے 2 مرتبہ قتل کرنے کی کوشش کی ہے۔ جب بھی تحقیقات ہوں گی، میں ثابت کروں گا کہ یہی وہ آدمی ہے جس نے مجھے قتل کرنے کی کوشش کی‘۔

عمران خان نے کہا کہ اس شخص کے ساتھ اور کون لوگ ملوث ہیں، سب کو پتہ ہے کہ کون ہیں۔ سوال میرا یہ ہے کہ بحیثیت سابق وزیراعظم کیا میں اپنے قتل کی کوشش پر ایف آئی آر نہیں درج کروا سکتا؟ اگر ایف آئی آر کٹتی اور تحقیقات ہوتیں تو اگر یہ شخص بے قصور ہوتا تو سامنے آ جاتا۔ یہ اتنا طاقتور شخص ہے کہ پنجاب میں ہم اپنی حکومت کے ہوتے ہوئے بھی ایف آئی آر میں اس کا نام نہیں دے سکے۔

انہوں نے کہا کہ پنجاب کے 2 پولیس افسران ڈی پی او گجرات اور سی سی پی او سی ٹی ڈی جنہوں نے شوٹر کا بیان ریکارڈ کیا تھا، انہوں نے ہماری انویسٹی گیشن کے اندر آنے سے منع کر دیا، اس کے پیچھے کون تھا؟

انہوں نے ڈی جی آئی ایس پی آر کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ آئی ایس پی آر صاحب! جب ایک ادارہ اپنی کالی بھیڑوں کے خلاف کارروائی کرتا ہے تو اس سے ادارے کی ساکھ بہتر ہوتی ہے۔ جو ادارہ کرپٹ لوگوں کو پکڑتا ہے وہ ادارہ مضبوط ہوتا ہے۔ اگر شوکت خانم میں کوئی ڈاکٹر غلط کام کرے تو ہم ایکشن لیتے ہیں، اس سے ہمارے ادارے کی ساکھ بہتر ہوتی ہے۔ یہ کیا بات آپ نے بنائی ہوئی ہے کہ ہم جس کا نام لیں تو کہا جائے کہ فوج کی ساکھ خراب کر رہے ہیں، میری فوج ہے، میرے پاکستان کی فوج ہے۔ مجھے آپ سے زیادہ شاید فوج کا خیال ہو۔

چیئرمین تحریک انصاف نے کہا کہ میں آج اسلام آباد جا رہا ہوں وہاں پر پولیس، رینجرز اور دیگر فورسز بلا کر قوم کا پیسہ ضائع کرنے کی کوئی ضرورت نہیں ہے، سیدھا میرے پاس وارنٹ لے کر آئیں، میرے وکیل ہوں گے۔ میں خود ہی جیل میں چلا جاؤں گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں