مکہ مکرمہ: ہوٹل میں آگ لگنے سے آٹھ پاکستانی جاں بحق، چھ زخمی

وزیر اعظم شہباز شریف کا واقعہ پر اظہار افسوس اور مرحومین کے لواحقین کے ساتھ اظہار ہمدردی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کے شہر مکہ مکرمہ میں گذشتہ رات ابراہیم خلیل روڈ پر واقع ہوٹل میں آتشزدگی کے نتیجے میں 8 پاکستانی عمرہ زائرین جاں بحق جبکہ 6 زخمی ہو گئے۔

پاکستان کے ویلفیئر قونصل کے مطابق جاں بحق 4 پاکستانیوں کی شناخت ہو گئی ہے، دو عمرہ زائرین کا تعلق وہاڑی اور دو کا قصور سے ہے۔

ادھر میڈیا کے سوالوں کا جواب دیتے ہوئے ترجمان دفتر خارجہ ممتاز زہرا بلوچ نے تصدیق کی کہ ’سانحے میں 8 ہلاکتوں اور 6 پاکستانیوں کے زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں‘۔ انہوں نے مزید کہا کہ جدہ میں ہمارا مشن متاثرین اور ان کے اہل خانہ کو امداد فراہم کرنے کے لیے مقامی حکام سے رابطے میں ہے۔

سول ڈیفنس کے مطابق ابتدائی تحقیقات سے معلوم ہوا تھا کہ عمارت میں سکیورٹی اور سیفٹی تقاضوں کی پاسداری نہ ہونے کی وجہ سے آگ لگی تھی۔

دریں اثنا وزیر اعظم محمد شہباز شریف نے بھی الگ لگنے کے واقعہ پر رنج وغم اور افسوس جبکہ متاثرہ خاندانوں کے ساتھ اظہار ہمدردی اور تعزیت بھی کی۔

انہوں نے وزارت مذہبی امور کو زخمیوں کی بہترین دیکھ بھال اور جاں بحق افراد کے لواحقین کو ہر ممکن سہولت فراہم کرنے کی ہدایت کی جبکہ مرحومین کی مغفرت اور اہل خانہ کے لیے صبر جمیل کی دعا بھی کی۔

دریں اثنا اسپیکر قومی اسمبلی راجا پرویز اشرف اور ڈپٹی اسپیکر زاہد اکرم درانی نے مکہ مکرمہ میں ہوٹل میں آگ لگنے سے عمرہ کے لیے گئے پاکستانیوں کے جاں بحق اور زخمی ہونے کی اطلاعات پر افسوس اور غم کا اظہار کیا ہے۔

یاد رہے کہ گزشتہ ماہ دبئی کی ایک رہائشی عمارت کی چوتھی منزل میں آتشزدگی کے سبب 3 پاکستانیوں سمیت 16 افراد ہلاک جبکہ 9 زخمی ہو گئے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں