بحیرہ عرب سے اٹھنے والا انتہائی شدید سائیکلون بپر جوائے ساحلی علاقے کے قریب پہنچ گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

بحیرہ عرب سے اٹھنے والا انتہائی شدید سمندری طوفان بپر جوائے ساحلی علاقے کے قریب پہنچ گیا، طوفان کا کیٹی بندر سے فاصلہ مزید کم ہو کر تقریباً ڈیڑھ سو کلو میٹر رہ گیا۔

نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی کی جانب سے جمعرات کو جاری تفصیلات کے مطابق بپر جوائے کراچی سے230 جبکہ ٹھٹھہ سے 235 کلو میٹر جنوب کی سمت میں ہے۔

طوفان کی سطح پر ہواؤں کی رفتار 120 سے 140 کلو میٹر فی گھنٹہ ہے جبکہ اس کے مرکز میں 150 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے ہوائیں چل رہی ہیں، کراچی سمیت سندھ اور بلوچستان کے قریبی ساحلی علاقوں میں تیز آندھی اور شدید بارشوں کی صورت میں اثرات رونما ہوسکتے ہیں۔ طوفان کی سمت شمال مشرق کی جانب رہے گا اور آج شام کو اس کے کیٹی بندر اور بھارتی گجرات کے درمیانی ساحلی علاقے میں ٹکرانے کا امکان ہے، جب کہ طوفان کے ممکنہ اثرات کی وجہ سےتیز ہوائیں اور شدید بارش متوقع ہے۔

این ڈی ایم اے کے مطابق اب تک ساحلی علاقوں سے 81 ہزار سے زیادہ افراد کو محفوظ مقامات پر منتقل کیا جا چکا ہے اور تمام متعلقہ ادارے ممکنہ طوفان کے پیشِ نظر ہائی الرٹ پر ہیں۔

محکمہ موسمیات (پی ایم ڈی) کی جانب سے جاری کردہ تازہ ترین الرٹ میں کہا گیا تھا کہ یہ طوفان کراچی کے جنوب میں تقریباً 230 کلومیٹر، ٹھٹہ سے 235 کلومیٹر اور کیٹی بندر سے 155 کلومیٹر فاصلے پر موجود ہے۔

وفاقی وزیر برائے موسمیاتی تبدیلی شیری رحمٰن کا کہنا ہے کہ 72 ہزار سے زائد افراد کو محفوظ مقامات پر منتقل کیا جا چکا ہے، جولائی میں ایک اور سائیکلون کی آمد کا خدشہ ہے۔

الرٹ میں کہا گیا کہ طوفان کی سطح پر 120 سے 140 کلومیٹر فی گھنٹہ جبکہ اس کے مرکز کے ارد گرد 150 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے ہوائیں چل رہی ہیں، جبکہ سمندری حالات کے باعث سسٹم سینٹر کے ارد گرد زیادہ سے زیادہ لہروں کی اونچائی 25 سے 30 فٹ ہے۔

اس میں مزید کہا گیا کہ انتہائی شدت کے طوفان نے شمال مشرق کی جانب مڑنا شروع کر دیا ہے، 15 جون (آج) کی شام کیٹی بندر اور بھارتی گجرات کے ساحل کے درمیان اس کے خشکی سے ٹکرانے کا امکان ہے، اس دوران 100 سے 120 کلو میٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے ہوائیں چل سکتی ہیں۔

الرٹ میں کہا گیا ہے کہ سندھ کے علاقے ٹھٹہ، سجاول، بدین، تھرپارکر، میرپورخاص اور عمرکوٹ کے اضلاع میں 15 سے 17 جون تک بڑے پیمانے پر آندھی/گرج چمک اور تیز بارش کا امکان ہے۔

محکمہ موسمیات کی جانب سے جاری تازی ترین الرٹ میں آج اور کل (جمعہ کو) کراچی، حیدرآباد، ٹنڈو محمد خان، ٹنڈو الہیار، شہید بینظیر آباد اور سانگھڑ میں گرد آلود ہوائیں چلنے اور گرج چمک کے ساتھ بارش کی پیش گوئی کی گئی ہے۔

الرٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ آج اور کل بلوچستان کے ضلع حب، لسبیلا اور خضدار میں گرد آلود ہوائیں چلنے اور گرج چمک کے ساتھ بارش کا امکان ہے۔

محکمہ موسمیات کے الرٹ میں مزید کہا گیا کہ کیٹی بندر میں 3 سے 4 میٹر کی طوفانی لہر متوقع ہے، جہاں یہ طوفان خشکی سے ٹکرائے گا۔

وزیر برائے موسمیاتی تبدیلی شیری رحمٰن نے ڈیزاسٹر مینجمنٹ کے تمام محکموں اور موسمی سیٹلائٹ کی ایک مشترکہ رپورٹ بھی جاری کی۔

رپورٹ کے مطابق سمندری طوفان بائپر جوائے دوپہر تک خشکی سے ٹکرائے گا، کراچی، حیدرآباد، ٹنڈو محمد خان، ٹنڈو الہیار، دادو، شہید بینظیر آباد اور سانگھڑ میں 100 ملی میٹر سے زائد بارش کی پیش گوئی ہے۔

علاوہ ازیں ٹھٹہ، سجاول، میرپور خاص، بدین، عمرکوٹ اور تھرپارکر میں 15 سے 17 جون کے درمیان 300 ملی میٹر سے زیادہ بارش کی پیش گوئی کی گئی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں