تربت میں پولیس وین کے قریب خودکش بم دھماکہ، ایک پولیس اہلکار شہید

دہشت گردوں کے مذموم مقاصد کبھی کامیاب نہیں ہوں گے: وزیراعلی بلوچستان میر عبدالقدوس بزنجو

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

تربت میں پولیس وین کے قریب خودکش بم دھماکے کے نتیجے میں ایک پولیس اہلکار شہید اور ایک زخمی ہوگیا۔

ضلع کیچ کے مرکزی شہر تربت کے علاقے چاکر اعظم چوک پر پولیس کی گاڑی کو بم دھماکے سے نشانہ بنایا گیا جس میں ابتدائی طور پر امتیاز نامی اہلکار جاں بحق اور ایک اور اہلکار زخمی ہوگیا ۔ پولیس حکام کے مطابق دھماکا خودکش تھا اور حملہ آور خاتون خودکش بمبار تھی۔

ایس ایس پی کیچ محمد بلوچ نے بتایا کہ دھماکا خودکش تھا اور حملہ آور خاتون خودکش بمبار تھی، ادھر پولیس نے کی جانب سے مبینہ خودکش بمبار خاتون کی تصویر جاری کردی گئی ہے۔

بعد ازاں وزیراعلی بلوچستان میر عبدالقدوس بزنجو نے تربت بم دھماکے کی مزمت کرتے ہوئے دھماکے میں ایک پولیس اہلکار کی شہادت اور ایک خاتون اہلکار کے زخمی ہونے پر دکھ اور افسوس کا اظہار کیا ہے۔

وزیراعلی نے کہا کہ دہشت گردی کا مقصد ترقیاتی عمل کو روکنا اور سکیورٹی فورسز کو مرعوب کرنا ہے لیکن دہشت گردوں کے مزموم مقاصد کبھی کامیاب نہیں ہوں گے۔انہوں نے کہا کہ ترقی کا عمل جاری رکھ کر عوام کی فلاح و بہبود اور صوبے کی پسماندگی کے خاتمے کو یقینی بنائیں گے، سکیورٹی فورسز کے عزم و حوصلہ کو پست نہیں کیا جا سکتا۔

وزیراعلی نے کہا کہ مکران کے باشعور عوام ترقی مخالف عناصر کے عزائم ناکام بنائیں گے۔وزیر داخلہ بلوچستان میر ضیااللہ لانگو نے تربت میں بم دھماکہ کی مذمت کرتے ہوئے واقعہ کی رپورٹ طلب کرلی۔

وزیر داخلہ نے کہا کہ بیرونی قوتوں کی ایما پر بننے والے دہشت گردی کے منصوبے کو خاک میں ملائیں گے، ہمیں محفوظ بنانے والے اپنے محافظین کی قربانیوں کو سلام پیش کرتا ہوں۔وزیر داخلہ بلوچستان نے کہا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ امن کے مکمل حصول تک جاری رہے گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں