توشہ خانہ کیس قابل سماعت قرار دینے کے عدالتی فیصلے کے خلاف ابتدائی سماعت مکمل

چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ نے درخواست کے قابل سماعت ہونے پر فیصلہ محفوظ کر لیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

توشہ خانہ کیس قابل سماعت قرار دینے کیخلاف اپیل پر فیصلہ محفوظ کر لیا گیا۔ تفصیلات کے مطابق اسلام آباد ہائی کورٹ میں توشہ خانہ کیس قابل سماعت قرار دینے کے خلاف چیئرمین تحریک انصاف عمران خان کی اپیل پر سماعت ہوئی۔

چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ عامر فاروق نے سماعت کی۔ عمران خان کے وکیل خواجہ حارث نے دلائل دیئے کہ ہائی کورٹ نے کیس دوبارہ ٹرائل کورٹ کو بھیجا تھا؛ ہائی کورٹ نے ٹرائل کورٹ کو درخواست پر فیصلے کے لیے سات دن کا وقت دیا تھا۔

وکیل نے بتایا کہ ٹرائل نے چھ جولائی کو درخواست پر ابتدائی سماعت کی، ہم نے استدعا کی تھی کہ پیر تک سماعت ملتوی کی جائے۔ سات دن 12 جولائی کو مکمل ہونے تھے۔ عدالت نے آٹھ جولائی کو فیصلہ محفوظ ہونے کے 15 منٹ بعد فیصلہ سنا دیا۔

اسلام آباد ہائی کورٹ میں توشہ خانہ کیس قابل سماعت قرار دینے کے خلاف اپیل پر ابتدائی دلائل مکمل کر لیے گئے،چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ نے اپیل قابل سماعت ہونے سے متعلق فیصلہ محفوظ کر لیا۔

یاد رہے کہ گزشتہ روز ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن عدالت نے توشہ خانہ فوجداری کیس میں عمران خان کی جج پر عدم اعتماد کی درخواست کو مسترد کر دیا تھا۔ ایڈیشنل سیشن جج ہمایوں دلاور نے توشہ خانہ فوجداری سے متعلق سماعت کا محفوظ فیصلہ سنایا،عدالت نے چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کی حاضری سے استثنٰی کی درخواست منظور کی۔

عدالت نے عمران خان کو 20 جولائی کو ذاتی حیثیت میں طلب کیا،جبکہ چیئرمین پی ٹی آئی کی جج پر عدم اعتماد کی درخواست مسترد کی گئی۔ عدالت نے سوشل میڈیا پر چلائی جانے والی مہم پر تحفظات کا اظہار کیا۔ جج ہمایوں دلاور نے قرار دیا کہ اپنے تحفظات کو فیصلے میں تحریر کیا ہے،اسلام آباد ہائی کورٹ سوشل میڈیا مہم کے معاملے کو دیکھ سکتی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں