جتھوں سے نہیں، مذاکرات صرف پاکستان اور افغان عبوری حکومت کے مابین ہوں گے: آرمی چیف

فوج، سکیورٹی کے تمام ادارے اور پاکستان کی عوام ایک ہیں، جو لوگ امن کو برباد کرنا چاہتے ہیں وہ ہم میں سے نہیں: جنرل عاصم منیر کا پشاور میں گرینڈ جرگے سے خطاب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
5 منٹس read

آرمی چیف جنرل عاصم منیر نے واضح کیا ہے کہ اگر مذاکرات ہوئے تو صرف پاکستان اور افغان عبوری حکومت کے مابین ہوں گے، کسی بھی گروہ یا جتھے سے بات نہیں کی جائے گی، افغان مہاجرین کو پاکستان میں یہاں کے قوانین کے مطابق رہنا ہو گا، دہشت گردوں کے پاس ریاست کے سامنے سر تسلیم خم کرنے کے علاوہ اور کوئی راستہ نہیں۔ پاکستان ریاست مدینہ کے بعد کلمے پر بننے والی دوسری ریاست ہے، دنیا کی کوئی طاقت پاکستان کا کچھ نہیں کر سکتی۔

پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے مطابق پشاور میں تاریخی گرینڈ جرگہ میں چیف آف آرمی اسٹاف جنرل عاصم منیر نے خصوصی طور پر شرکت کی۔ جنرل عاصم منیر نے فورٹ بالا حصار(ہیڈ کوارٹرز فرنٹیئر کور خیبر پختونخوا) میں یادگار شہدا پر پھول چڑھائے اور فاتحہ خوانی کی۔

سربرابراہ پاک فوج نے خیبرپختونخوا کے نئے ضم شدہ اضلاع (NMDs) کے قبائلی عمائدین کے ساتھ ساتھ زندگی کے تمام شعبوں سے تعلق رکھنے والے معززین سے ملاقات کی۔جنرل سید عاصم منیر نے خیبر پختونخوا کے مشاران، عمائدین اور نمائندوں کے تاریخی گرینڈ جرگے سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ فوج، سکیورٹی کے تمام ادارے اور پاکستان کی عوام ایک ہیں، جو لوگ امن کو برباد کرنا چاہتے ہیں وہ ہم میں سے نہیں ہیں۔

آرمی چیف نے کہا کہ پاکستانی فوج شہدا کی فوج ہے، پاک فوج کا نعرہ ہے ایمان، تقوی اور جہاد فی سبیل اللہ ہے، ہم آپ میں سے ہیں اور آپ ہم میں سے ہیں، پاکستان ریاست مدینہ کے بعد کلمے پر بننے والی دوسری ریاست ہے، دنیا کی کوئی طاقت پاکستان کا کچھ نہیں کر سکتی۔

پاک فوج کے سپہ سالار کا کہنا تھا کہ اگر مذکرات ہوئے تو وہ صرف پاکستان اور عبوری کی حکومت کے مابین ہوں گے، کسی بھی گروہ یا جتھے سے بات نہیں کی جائے گی، اسلام سلامتی اور امن کا دین ہے، جنہوں نے اس دین کو دہشت گردی کی بھینٹ چڑھایا ہے ان کو جواب دینا پڑے گا۔

جنرل عاصم منیر نے مزید کہا کہ افغان مہاجرین کو پاکستان میں پاکستان کے قوانین کے مطابق رہنا ہو گا۔ افغان حکومت کو مخاطب کرتے ہوئے آرمی چیف نے کہا کہ کیا احسان کا بدلہ احسان کے علاوہ کچھ اور بھی ہو سکتا ہے؟ پاکستان کے آئین میں حاکمیت صرف اللہ کی ذات کی ہے، یہ خوارج کون سی شریعت لانا چاہتے ہیں؟

سربراہ پاک فوج نے مزید کہا کہ میں اور میری بہادر فوج دہشت گردی کے خلاف جنگ میں خون کے آخری قطرے تک لڑیں گے، دہشت گردوں کے پاس ریاست کے سامنے سر تسلیم کرنے کے علاوہ اور کوئی راستہ نہیں، ہم اللہ کے راستے میں جہاد کر رہے ہیں اور کامیابی ہماری ہی ہو گی۔

جنرل عاصم منیر کا کہنا تھا کہ پاک فوج کا مقصد اور نصب العین شہید یا غازی ہے، خیبر پختونخوا پولیس ایک شاندار فورس ہے اور اس کی بے پناہ قربانیاں ہیں، حکومتِ پاکستان کی منظوری کے بعد قبائل کے انضمام کے مسائل کے حل کے لیے ایک سیکرٹریٹ قائم کیا جائے گا، ہم قبائلی عوام کی معاشی ترقی کے حوالے سے ترقیاتی منصوبوں میں ان کی شرکت کو یقینی بنائیں گے۔

آرمی چیف نے کہا کہ خیبر پختونخوا حکومت کے ساتھ مل کر نئے ضم شدہ اضلاع میں 81 ارب روپے کی مالیت کے ترقیاتی اور فلاح وبہبود کے منصوبے شروع کئے جائیں گے، خیبر پختونخوا حکومت کے ساتھ مل کر نئے ضم شدہ اضلاع میں پولیس کے 43 منصوبوں کو 7 ارب روپوں کی لاگت سے مکمل کیا جائے گا اور 54 زیر تعمیر منصوبوں کے جلد مکمل ہونے میں تمام تر مدد فراہم کی جائے گی۔

آرمی چیف نے کہا ہے کہ پاک فوج اپنے قبائلی بھائیوں کے ساتھ کھڑی ہے اور انہیں کبھی تنہا نہیں چھوڑے گی، قبائلیوں نے مادر وطن کے امن اور خوشحالی کیلئے بے شمار قربانیاں دی ہیں، یہ وقت تمام قبائلی علاقوں کو ترقی دینے اور نوجوانوں پر توجہ مرکوز کرنے کا ہے، پاکستان کی مسلح افواج کے خلاف دشمن قوتوں کے پروپیگنڈے سے قانون کے مطابق نمٹا جائے گا۔

جنرل عاصم منیر نے کہا کہ حکومتی منظوری کے بعد قبائل کے انضمام کے مسائل کے حل کے لیے ایک سیکرٹریٹ قائم کیا جائے گا، ہم قبائلی عوام کی معاشی ترقی کے حوالے سے منصوبوں میں ان کی شرکت کو یقینی بنائیں گے، کے پی پولیس ایک شاندار فورس ہے اور اس کی بے پناہ قربانیاں ہیں، خیبرپختونخوا کو کانوں اور معدنیات کے بڑے ذخائر سے نوازا گیا ہے۔

اس موقع پر قبائلی مشاران نے کہا کہ قبائلی عوام فوج کے ساتھ تھی اور ساتھ رہے گی۔آخر میں قبائلی مشاران نے ملکی ترقی و خوشحالی سمیت امن کے لیے خصوصی دعا بھی کی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں