پاکستان: ترسیلات زر میں نمایاں کمی، سعودی عرب سے تارکین وطن کا سب سے زیادہ تعاون

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

پاکستان کی ترسیلات زر میں جولائی میں ماہانہ بنیاد پر 7.3 فیصد سے زیادہ کی کمی واقع ہوئی، اسٹیٹ بینک نے جمعرات کو بتایا کہ سعودی عرب سب سے زیادہ تعاون کرنے والا ملک ہے۔

اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے مطابق، بیرون ملک کام کرنے والے پاکستانیوں کی جانب سے بھیجے گئے زر مبادلہ کے طور پر 2 ارب ڈالر کی آمد ریکارڈ کی گئی ہے۔

تاہم، سال بہ سال کی بنیاد پر آمد میں 19 فیصد کی بڑی کمی ریکارڈ کی گئی۔

اسٹیٹ بینک نے ایک بیان میں کہا کہ "23 جولائی کے دوران ترسیلات زر کی مد میں بالترتیب سعودی عرب سے (486.7 ملین)، متحدہ عرب امارات سے (315.1 ملین)، برطانیہ سے (305.7 ملین) ڈالر اور امریکہ سے (238.1) ملین ڈالر کی آمد ہوئی۔"

پاکستان اور سعودی عرب کے درمیان گہرے ثقافتی، دفاعی اور اقتصادی تعلقات ہیں۔تقریبا 20 لاکھ سے زیادہ پاکستانی سعودی عرب میں مقیم ہیں، جس کی وجہ سے یہ ملک میں آنے والی ترسیلات زر کا سب سے بڑا ذریعہ ہے۔

ترسیلات زر میں کمی ایک ایسے وقت میں سامنے آئی ہے جب پاکستان نگران حکومت کو اقتدار منتقل کر رہا ہے۔

ایک ماہ سے زیادہ عرصے سے معاشی اور سیاسی بحرانوں میں الجھے ہوئے، پاکستان نے کئی مہینوں کی تاخیر کے بعد جون کے آخر میں بین الاقوامی مالیاتی فنڈ کے ساتھ 3 بلین ڈالر کا ایک اہم معاہدہ کیا، معاشی ماہرین نے معاہدے پر دستخط کرنے میں تاخیر کو معاشی بدحالی کی اہم وجہ قرار دیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں