اندورنی اور بیرونی دشمن سے بخوبی آگاہ ہیں: آرمی چیف جنرل سید عاصم منیر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

پاکستان فوج کے سربراہ جنرل سید عاصم منیر کا کہنا تھا کہ پاکستانی قوم کو خوف اور مایوسی پھیلانے والے عناصر کا منفی پروپیگنڈا مسترد کرنا ہو گا، کیونکہ ایسے عناصر معاشرے میں نا امیدی پھیلانے کی ناکام کوششوں میں سرگرم ہیں۔ بانیانِ ملت کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے جنرل عاصم منیر نے واضح کیا ہے کہ پاکستان اپنی محنت سے حاصل کی گئی آزادی کا دفاع کرنا جانتا ہے۔

چھیترویں یوم آزادی کے موقع پر کاکول [ایبٹ آباد] میں واقع پاکستان ملٹری اکیڈمی میں منعقدہ ’آزادی پریڈ‘ کی تقریب سے خطاب کے دوران آرمی چیف نے یوم آزادی کی اہمیت اور پاکستان کی تخلیق کے پس پردہ جذبے پر زور دیا جس کی بنیاد دو قومی نظریہ ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ قوم نے آزادی منانے، مساوات قائم کرنے اور مسرت کی تلاش کی روایت کو ہمیشہ برقرار رکھا ہے، جسے ہمیں آئندہ بھی برقرار رکھنا چاہیے۔

جنرل عاصم منیر نے ملک کے بے پناہ وسائل اور نوجوانوں کے جوش و جذبے کی تعریف کرتے ہوئے ان پر زور دیا کہ وہ ایمان، اتحاد اور تنظیم کے اصول پر قائم رہیں۔

جغرافیائی تنازعات سے لے کر اندرونی خطرات تک قوم کو درپیش بے شمار چیلنجز کا اعتراف کرتے ہوئے آرمی چیف نے سخت لہجے میں واضح کیا کہ میں ہمارے عظیم قائد محمد علی جناحؒ کے الفاظ میں سب کو خبردار کرتا ہوں کہ دنیا میں ایسی کوئی طاقت نہیں جو پاکستان کو ختم کر سکے، پاک فوج ہر قیمت پر پاکستان کی خود مختاری کے دفاع کے لیے تیار ہے۔

انہوں نے اس موقع پر مقبوضہ کشمیر کے عوام کے ساتھ اظہار یکجہتی کیا اور خطے میں بھارتی اقدامات کے خلاف عالمی برادری کی جانب سے کوئی کارروائی نہ کیے جانے کی مذمت کی۔

انہوں نے مزید کہا کہ عالمی برادری کا ضمیر اس بات کا ادراک کرے کشمیر میں بھارتی زیادتیوں کا تدارک نہیں کیا جا رہا اور ان کی آزادی اور حق خود ارادیت سے انکار کیا جا رہا ہے۔

پریڈ کا منظر
پریڈ کا منظر

انہوں نے خیبرپختونخوا اور بلوچستان کے لوگوں کا بھی شکریہ ادا کیا، جو دو دہائیوں سے دہشت گردی اور پراکسی جنگوں کے خلاف ڈٹ کر لڑ رہے ہیں۔

بھارت کو مخاطب کرتے ہوئے آرمی چیف نے واضح کیا کہ پاکستان اپنی آزادی کا دفاع کرنا جانتا ہے اور جارحانہ عزائم سے نہیں گھبرائے گا، ہمیں آزادی ایک عظیم جدوجہد کے بعد ملی اور ہم اس کا دفاع کرنا جانتے ہیں۔

افغانستان کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا: ’افغان بھائیوں کو ادراک ہونا چائیے کہ ہم ایک مہمان نواز قوم ہیں اور ہماری خواہش ہے کہ ہماری مخلصانہ کوششوں کا اسی پیرائے میں جواب دیا جائے۔‘’افغان سرزمین ہمارے خلاف استعمال نہیں ہونا چائیے۔‘

علاقائی تعاون کی اہمیت اجاگر کرتے ہوئے جنرل عاصم منیر نے کہا کہ پاکستان اپنے دیرینہ دوست چین کے ساتھ تعاون اور اشتراک کے نئے دور میں داخل ہو رہا ہے، جبکہ سعودی عرب، متحدہ عرب امارات، ترکی، قطر اور ایران کے ساتھ تاریخی مراسم میں مزید بہتری آرہی ہے۔

خطاب کے اختتام پر جنرل عاصم منیر نے قوم پر زور دیا کہ عوام متحد ہوکر کھڑے ہوں اور اپنی ذات سے بالاتر ہوکر پاکستان کی خدمت کریں۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہمیشہ یاد رکھیں، پاکستان ہماری پہچان اور ہمارے وجود کا جواز ہے، پاکستان ہے تو ہم ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں