امریکی اہلیہ کی لاش دفنانے کی کوشش میں پاکستانی شوہر رنگے ہاتھوں گرفتار

لاہور میں ایک شخص کو اس وقت گرفتار کر لیا گیا جب وہ نصف شب کو اپنی امریکی اہلیہ کی تدفین کے لیے مقامی قبرستان میں قبر کھودنے میں مصروف تھا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

لاہور کے پولیس حکام کہنا ہے کہ پولیس نے گذشتہ شب ایک شخص کو اس وقت گرفتار کیا ہے جب وہ آدھی رات کے وقت اپنی امریکی اہلیہ کو دفنانے کے لیے مقامی قبرستان میں قبر کھودنے میں مصروف تھے۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق لاہور پولیس کا کہنا ہے کہ ’ملزم نے گرفتاری کے بعد اپنی 50 سالہ اہلیہ دانیہ کرسٹو خان کو قتل کرنے کا اعتراف کر لیا ہے۔‘

پولیس آفیسر محمد ندیم نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا کہ ’قبرستان کے گورکن نے پولیس کو ٹیلی فون پر اطلاع دی کہ ایک شخص بغیر کفن اور جنازے کے ایک میت کو دفنانے کی کوشش کر رہا ہے۔‘

ان کے بقول: ’جب ہم قبرستان پہنچے تو ہم نے دیکھا کہ میت کو پوری طرح سے ڈھانپا نہیں گیا تھا جس پر ہمیں شبہ ہوا۔‘

امریکی محکمہ خارجہ نے بھی ایک امریکی خاتون کی لاہور میں موت کی تصدیق کی ہے۔

محکمہ خارجہ کے ترجمان نے کہا کہ ’ہم متاثرہ خاندان کے ساتھ رابطے میں ہیں اور انہیں قونصلر رسائی فراہم کر رہے ہیں۔‘

ملزم کو نائن الیون حملوں کے بعد امریکہ سے ملک بدر کر دیا گیا تھا اور ان کے پیچھے رہ جانی والی اپنی اہلیہ اور بیٹیوں سے تعلق نہ ہونے کے برابر تھا۔

رپورٹس کے مطابق ملزم نے اپنی شدید علالت کا بہانہ کر کے اہلیہ کو امریکہ سے پاکستان آنے پر مجبور کیا تھا۔

واقعے کی رپورٹ کے مطابق دانیہ کرسٹو خان کی میت کے سر اور گردن پر زخموں کے نشان پائے گئے جب کہ موت کی اصل وجوہات جاننے کے لیے ان کی لاش کو پوسٹ مارٹم کے لیے بھیج دیا گیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں