پاک فوج نے بٹگرام میں چیئر لفٹ سے تمام آٹھ افراد کو بحفاظت ریسکیو کر لیا

چیئر لفٹ کی کیبل ٹوٹنے سے 600 فٹ کی بلندی پر چھ بچوں سمیت آٹھ افراد پھنس گئے تھے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

پاکستان کے نگران وزیر داخلہ سرفراز بگٹی کا کہنا ہے کہ بٹگرام چیئر لفٹ میں پھنسے تمام افراد کو بچا لیا گیا جس کے بعد ریسکیو آپریشن کامیابی سے مکمل کر لیا گیا ہے۔

نگران وزیر داخلہ سرفراز بگٹی نے سوشل میڈیا پر اپنے بیان میں ریسکیو آپریشن کے مکمل ہونے کا اعلان کیا ہے۔

سرفراز بگٹی کا کہنا ہے کہ ’اللہ کا شکر ہے کہ بٹگرام میں ریسکیو کا عمل کامیابی سے مکمل کر لیا گیا ہے۔‘ انہوں نے لکھا کہ ’اس مشکل آپریشن کو عزم اور جان کی پروا کیے بغیر مکمل کرنے پر مسلح افواج کے اہلکار تعریف کے لائق ہیں۔‘

صوبہ خیبرپختونخوا کے ضلع الائی میں پاشتو کے مقام پر منگل کی صبح تار ٹوٹنے سے چیئر لفٹ میں چھ بچوں سمیت آٹھ افراد پھنس گئے تھے۔

اس سے قبل پاکستان فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کا کہنا تھا کہ بٹگرام چیئر لفٹ میں پھنسے افراد میں سے پانچ بچوں کو ریسکیو کر لیا گیا ہے جبکہ بقیہ افراد کو ریسکیو کرنے کے لیے پاکستان آرمی کا آپریشن اندھیرے میں بھی جاری رہا۔

واضح رہے الائی میں کیبل کار کی رسی ٹوٹنے کا واقعہ صبح سات سے آٹھ بجے کے درمیان پیش آیا جب مقامی زبان میں ڈولی کہے جانے والی کیبل کار کے ذریعے طلبہ اسکول جارہے تھے، اس دوران دو رسیاں ٹوٹنے سے کیبل کار فضا میں کئی فٹ بلندی پر پھنس گئی۔

اس حوالے سے واضح نہیں ہے کہ یہ کتنی بلندی پر پھنسی ہوئی ہے البتہ نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی(این ڈی ایم اے) کے مطابق یہ کیبل کار ایک ہزار سے 2 ہزار فٹ کی بلندی پر پھنسی ہوئی ہے۔

کیبل کار جھانگری ندی کے اوپر محض ایک تار کے سہارے ہوا میں معلق ہے، اطراف میں بلند و بالا پہاڑ اور پتھریلی زمین ہے۔

پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ(آئی ایس پی آر) کے مطابق پاک آرمی نے ریسکیو آپریشن میں مزید تین بچوں کو ریسکیو کر لیا ہے اور اب تک مجموعی طور پر 5 بچے ریسکیو کیے جا چکے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ جی او سی ایس ایس جی خود اِس ریسکیو آپریشن کی قیادت کر رہے ہیں اور باقی افراد کو ریسکیو کرنے کے لیے پاک فوج کا آپریشن جاری ہے۔

اس سے قبل خبر ایجنسی رائٹرز کو ریسکیو ایجنسی کے ترجمان اور مقامی عہدیداروں نے تصدیق کی تھی کہ مقامی طور پر ڈولی کہی جانے والی کیبل کار میں پھنسے دو بچوں کو ریسکیو کر لیا گیا ہے۔

ادھر ڈی آئی جی ہزارہ طاہر ایوب نے بھی دو بچوں کو ریسکیو کرنے کی تصدیق کی تھی۔

پاکستان ٹیلی ویژن کے مطابق اندھیرے اور موسمی حالات کے سبب فضائی آپریشن بندکردیا گیا ہے تاہم دیگر طریقوں سے ریسکیو کی کوششیں جاری ہیں۔

پاکستان کی وزارت داخلہ نے اپنے ایکس [سابقہ ٹوئٹر] اکائونٹ پر ایک پوسٹ میں بتایا کہ نگران وزیر داخلہ سرفراز احمد بگٹی کی بٹگرام چیئر لفٹ میں پھنسے بچوں اور اساتذہ کو بچانے کے لیے ریسکیو آپریشن تیز کرنے کی ہدایت وزیر اعظم کی ہدایت پر پاک فوج کو ریسکیو آپریشن میں شامل ہونے کی درخواست ریسکیو آپریشن میں تمام وسائل برائے کار لائے جائیں۔

دوسری جانب پاک فوج نے بٹگرام چیئر لفٹ میں پھنسے ہوئے افراد کے لیے ریسکیو آپریشن شروع کر دیا اور اس سلسلے میں ہیلی کاپٹر پہنچ گیا ہے۔

ہیلی کاپٹر سلنگ آپریشن کے لیے ریکی کرے گا کیوں کہ چیئر لفٹ کی تین میں سے دو تاریں ٹوٹ چکی ہیں اور ہیلی کاپٹر سے پیدا ہونے والے ہوائی پریشر سے اکیلی بچ جانے والی تار بھی ٹوٹ سکتی ہے، اس لیے ہیلی کاپٹر سے ریسکیو آپریشن کو انتہائی محتاط انداز میں کیے جانے کی کوشش کی جائے گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں