جسٹس قاضی فائز عیسیٰ سپریم کورٹ آف پاکستان کے 29 ویں چیف جسٹس بن گئے

صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے نو منتخب چیف جسٹس جسٹس قاضی فائز عیسیٰ سے حلف لیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے پاکستان کے 29 ویں چیف جسٹس کی حیثیت سے اپنے عہدے کا حلف اٹھا لیا ہے۔

پاکستانی صدر ڈاکٹر عارف علوی نے صدارتی رہائش گاہ پر منعقدہ خصوصی تقریب میں فائز عیسیٰ سے ان کے عہدے کا حلف لیا۔ اس موقع پر فائز عیسیٰ کی اہلیہ سرینا عیسیٰ بھی ان کے قریب موجود تھیں۔

اس خصوصی تقریب میں پاکستان کے نگران وزیر اعظم انوار الحق کاکڑ اور پاکستانی فوج کے سربراہ جنرل عاصم منیر، نگران کابینہ کے ارکان اور دیگر اہم شخصیات نے شرکت کی۔

قاضی فائز عیسیٰ 26 اکتوبر 1959ء کو صوبہ بلوچستان کے دارالحکومت کوئٹہ میں پیدا ہوئے۔ ان کے مرحوم والد قاضی محمد عیسیٰ تحریک پاکستان کے ایک نمایاں کارکن تھے۔ جبکہ ان کے دادا قاضی جلال الدین پاکستان کے قیام سے قبل ریاست قلات کے وزیر اعظم تھے۔

قاضی فائز عیسیٰ بلوچستان سے تعلق رکھنے والے دوسری شخصیت ہیں جنہیں پاکستان کی سپریم کورٹ کا چیف جسٹس بننے کا شرف حاصل ہوا ہے۔ ان سے قبل افتخار محمد چوہدری نے اس عہدے پر خدمات انجام دی تھیں۔

پاکستان سپریم کورٹ کی ویب سائٹ پر نئے چیف جسٹس کے بارے میں فراہم کردہ معلومات کے مطابق قاضی فائز عیسیٰ گزشتہ 45 برس سے قانون کے شعبے منسلک ہیں۔ وکالت کی چار سالہ ڈگری مکمل کرنے کے بعد انہوں نے 27 برس تک بطور وکیل کام کیا۔

انہیں پانچ اگست 2009ء کو بلوچستان ہائیکورٹ کا چیف جسٹس مقرر کیا گیا۔ انہوں نے یہ ذمہ داری پانچ ستمبر 2014ء کو سپریم کورٹ میں بطور جسٹس تعیناتی تک انجام دی۔

واضح رہے کہ 21 جون کو صدرِ مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کی بطور چیف جسٹس آف پاکستان تعیناتی کی منظوری آئین کے آرٹیکل 175 اے 3 کے تحت دی تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں