آرمی چیف واضح کرچکے کہ اسمگلنگ میں ملوث اہلکاروں کا کورٹ مارشل ہوگا: وزیر داخلہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

نگران وزیر داخلہ سرفراز بگٹی نے کہا ہے کہ میں یہ کہہ دوں کہ اسمگلنگ میں اہلکاروں کی کوئی انوالمنٹ نہیں تھی تو یہ مناسب نہیں ہے، آرمی چیف نے واضح طور پر کہا ہے اسمگلنگ میں ملوث اہلکاروں کا کورٹ مارشل ہوگا۔

نگران وزیر اطلاعات مرتضی سولنگی کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے وزیر داخلہ سرفراز بگٹی نے کہا کہ نارکوٹکس پاکستان کے لیے بہت بڑا چیلنج ہے، حالانکہ ہمارے لیے کوئی بھی منشیات پیدا نہیں کی جاتیں۔ ہم نے اس کے خلاف کریک ڈاون شروع کیا ہے، جس کے نتیجے میں ہم نے 43 ٹن منشیات اب تک پکڑی ہے اور 242 مقدمات درج کیے جاچکے ہیں۔

سرفراز بگٹی نے کہا کہ ہم روزانہ کی بنیاد پر جو چیزیں خراب تھیں، ہم وہ ٹھیک کرنا چاہتے ہیں، اگر ہم محدود وقت میں وزیراعظم کے وژن کے مطابق اسے درست کر لیں، تو وہ مناسب ہوگا۔

اسمگلنگ میں سیکیورٹی ایجنسی کے ملوچ ہونے سے متعلق سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ آپ یہ بات بہت حد تک درست ہے کہ اگر میں یہ کہہ دوں کہ (سیکیورٹی ایجنسیز) ملوث ہی نہیں ہیں، تو یہ مناسب نہیں ہے کیونکہ جتنی بھی اسمگلنگ ہوئی ہے، یہ کوئی اونٹوں پر نہیں ہوئی، اسمگلنگ ٹرکوں پر ہو رہی تھی، اور اس میں جو بھی لوگ تھے، کیونکہ آرمی چیف ہیں انہوں نے بڑے واضح انداز میں ہدایت تھیں کہ نا صرف کورٹ مارشل ہوں گے بلکہ جو لوگ اس طرح کی پریکٹسز میں ملوث ہیں، ان کو جیل بھی بھیجا جائے گا۔

سرفراز بگٹی کا کہنا تھا کہ نگراں حکومت نے معاشی بہتری کیلئے اقدامات اٹھائے، ہم نے چھاپوں میں 2ہزارمیٹرک ٹن سے زائد گندم اور 8 ہزارمیٹرک ٹن چینی بھی برآمد کی ہے۔چینی کی اسمگلنگ کوجدیدٹیکنالوجی سے روکا اور 10ہزار 195لیٹرغیرقانونی پٹرول بھی برآمدکیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں