پاکستانی کوہ پیماوں سربازخان اورنائلہ کیانی نے دنیا کی چھٹی بلند ترین چوٹی کوسر کرلیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

پاکستانی کوہ پیماؤں نے دنیا کی چھٹی بلند ترین پہاڑی سر کرلی۔ کھیلوں کے شعبوں کی ایک این جی او الپائن کلب نے سرباز خان اور نائلہ کیانی کی اس عظیم کامیابی کی اپنے ایک جاری کردہ بیان میں تصدیق کی ہے۔ دنیا کی چھٹی بلند ترین چوٹی کی بلندی 8188 میٹر ہے۔

چو اویو نام کی یہ پہاڑی چوٹی نیپال اور چائنہ کے تبتی بارڈر پر دنیا کی سب سے بلند ترین چوٹی ماؤنٹ ایورسٹ کے شمال مغرب میں 30 کلومیٹر پر واقع ہے۔ الپائن کلب کے سیکٹری کرار حیدری کے مطابق دونوں پاکستانی کوہ پیماؤں نے بڑا چیلنج 28 گھنٹوں میں مکمل کرلیا۔

کرار حیدری نے میڈیا کو بتایا کہ سرباز خان پاکستان کے پہلے کوہ پیما ہیں جنہوں نے میراتھن الپائن سٹائل کلائمبنگ میں چڑھائی مکمل کی اور اس مشن میں انہیں 28 گھنٹے لگے ۔ وہ چو اویو کو اتنے کم وقت میں سر کرنے والے پہلے پاکستانی ہیں۔

سرباز خان واحد پاکستانی کوہ پیما ہیں جو دنیا کی بلند ترین 14 چوٹیوں میں سے اب تک 13 چوٹیاں سر کرچکے ہیں۔ مجموعی طور پر ان پہاڑی چوٹیوں کی بلندی 8000 میٹر بنتی ہے جو سرباز خان کے قدموں سے روندی جا چکی ہے اسی سبب سرباز خان کو "آٹھ ہزاری" بھی کہا جاتا ہے۔

سرباز خان کی سر کی جانے والی پہاڑیاں زیادہ تر ہمالیائی اور قراقرم کے پہاڑی سلسلوں میں پائی جاتی ہیں۔ کرار حیدری کے مطابق اب ان میں سے صرف تیرھویں بلند ترین چوٹی باقی رہ گئی ہے۔ پاکستان کے کوہ پیماؤں کی تعریف کرتے ہوئے انہوں نائلہ کیانی کو بھی سراہا جو پاکستان کی پہلی خاتون کوہ پیما ہیں جنہوں نے چو اویو کی بلند ترین چوٹی سر کی ہے۔ وہ بھی اب تک 8000 میٹر کی بلندی کو عبور کرچکی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں