پاکستان کا مقامی طور پر برقی موٹر سائیکلیں بنانے کے لیے 31 کمپنیوں کو لائسنس کا اجراء

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
8 منٹس read

وزارتِ صنعت و پیداوار کے انجینئرنگ ڈویلپمنٹ بورڈ کے حکام نے اس ہفتے کہا کہ پاکستان میں کم از کم چھ کمپنیاں برقی موٹر سائیکلیں تیار یا اسمبل کر رہی ہیں جبکہ 31 کمپنیوں کو لائسنس جاری ہو چکے ہیں۔ اس وقت جنوبی ایشیائی ملک برقی گاڑیوں (ای ویز) کو طویل مدت کے لیے اور بڑے پیمانے پر اپنانے کا مقصد رکھتا ہے۔

2019 میں منظور کردہ 'الیکٹرک وہیکل پالیسی 2020-25' برقی گاڑیوں کی مقامی مینوفیکچرنگ کو فروغ دینے کے لیے مراعات اور ٹیکس میں رعایت پیش کرتی ہے جس کا مقصد یہ دیکھنا ہے کہ برقی گاڑیاں 2030 تک تمام مسافر گاڑیوں اور ہیوی ڈیوٹی ٹرکوں کی فروخت کا 30 فیصد اور 2040 تک 90 فیصد حصہ لے لیں۔ یہ دو اور تین پہیوں والی گاڑیوں اور بسوں کے لیے پرعزم اہداف بھی طے کرتا ہے: 2030 تک نئی فروخت کا 50 فیصد اور 2040 تک 90 فیصد۔

چین، بھارت، انڈونیشیا اور ویتنام کے بعد پاکستان دنیا میں موٹر سائیکل کی پانچویں بڑی مارکیٹ ہے۔ 240 ملین سے زیادہ آبادی والے ملک میں تقریباً 23 ملین رجسٹرڈ موٹر سائیکلیں ہیں۔ اور ملک کا نقل و حمل کا شعبہ اس کے کاربن اخراج کے کل 30 فیصد کا ذمہ دار ہے۔ متعدد مطالعات کے مطابق زیادہ تر موٹر سائیکلیں گاڑیوں سے زیادہ فضائی آلودگی اور سموگ پیدا کرتی ہیں۔

پاکستان کی آٹو موٹیو انڈسٹری 30 لاکھ افراد کو براہِ راست اور بالواسطہ روزگار فراہم کرتی ہے اور ملکی خزانے میں اس کا حصہ سالانہ تقریباً 100 ارب روپے ہے۔

وزارتِ صنعت و پیداوار کے انجینئرنگ ڈویلپمنٹ بورڈ کے جنرل مینیجر (پالیسی) عاصم ایاز نے بتایا، "ہم نے اب تک 31 کمپنیوں کو برقی موٹر بائیکس کی مقامی تیاری کے لیے لائسنس جاری کیے ہیں اور وہ سبھی آہستہ آہستہ پیداوار شروع کر رہی ہیں۔" اور مزید کہا کہ اس وقت کم از کم چھ کمپنیاں مختلف قسم کی موٹر سائیکلیں تیار یا اسمبل کر رہی ہیں۔

ای وی پالیسی کے تحت ٹیکس مراعات میں برقی موٹر بائیکس کے لیے بیٹریوں، موٹر اور ڈرائیو ٹرین (انجن اور گیئر کی تبدیلی) کی درآمد پر ایک فیصد کسٹم ڈیوٹی شامل ہے جبکہ غیر ای وی حصوں پر کسٹم ڈیوٹی 15 فیصد ہے۔ دو تین پہیوں کی فروخت کے مرحلے پر جنرل سیلز ٹیکس پانچ سال کے لیے ایک فیصد مقرر کیا گیا ہے جس میں رجسٹریشن اور سالانہ ٹوکن ٹیکس سے استثنیٰ ہے۔

ایاز نے کہا، "ہم پرامید ہیں کہ یہ ترغیبات صنعت میں انقلاب لانے اور گرین ہاؤس گیسوں کے اخراج کو کم کرنے میں مدد کریں گی اور اس کے علاوہ ہنر مند اور غیر ہنر مند کارکنوں کو طویل مدت میں سبز ملازمتیں فراہم کریں گی۔"

اس وقت پاکستان میں برقی نقل و حرکت کو بڑے پیمانے پر مارکیٹ میں اپنانے پر کام کرنے والی ایک کمپنی لاہور میں قائم زپ ٹیکنالوجیز ہے جس نے گذشتہ ماہ 8,000 یونٹ سالانہ کی پیداواری صلاحیت کے ساتھ اپنی جدید بیٹری تبدیل کرنے والی برقی موٹر بائیکس کے لیے 1.2 ملین ڈالر جمع کیے ہیں۔

فرم کے پاس مقامی طور پر تیار کردہ پروڈکٹ پورٹ فولیو ہے جس میں مقصد کے تحت تیار کردہ برقی موٹر سائیکلیں، جدید بیٹری سویپ اسٹیشن، ملکیتی اور پیٹنٹ زیرِ التواء بیٹری فنِ تعمیر، کلاؤڈ سافٹ ویئر اور موبائل ایپس شامل ہیں۔

زپ ٹیکنالوجیز کے شریک بانی اور سی ای او حسن خان نے عرب نیوز کو بتایا، "ہمارا بنیادی مقصد برقی موٹر بائیکس کے ذریعے کاربن فٹ پرنٹ کو نمایاں طور پر کم کرنا اور صارفین کی روزانہ اور ماہانہ پٹرول کی قیمت میں کمی کے لیے ماحول دوست متبادل فراہم کرنا ہے۔"

کمپنی نے آزمائشی مقاصد کے لیے مقامی طور پر دس یونٹ تیار کیے ہیں جبکہ بڑے پیمانے پر پیداوار مارچ 2024 سے شروع ہو جائے گی۔

خان نے مزید کہا، "ہم اپنے سانچوں میں سرمایہ کاری کر رہے ہیں کیونکہ ہمارے تمام پرزہ جات بشمول چیسس مقامی طور پر ڈیزائن اور تیار کیے گئے ہیں۔"

کمپنی کا مقصد اگلے سال لاہور میں 60 بیٹری سویپ اسٹیشن قائم کرنا اور پاکستان بھر میں انہیں 4,000 اسٹیشنوں تک پھیلانا ہے تاکہ ایک منٹ سے بھی کم وقت میں بائیک کو ایندھن بھرنے میں مدد مل سکے: "ہم بائیک کے ساتھ بیٹری فروخت نہیں کریں گے کیونکہ اس سے قیمت دو گنا ہو جائے گی۔ اس کے بجائے ہم اسے بطور سروس پیش کریں گے۔"

خان نے کہا، ایک زپ موٹر سائیکل کی قیمت تقریباً 150,000 روپے فی یونٹ ($530) ہوگی لیکن ہم ایندھن پر 40 فیصد تک کی بچت پیش کرتے ہیں۔

درحقیقت ایک ایسے ملک میں جہاں پیٹرول اور ڈیزل کی قیمت 300 روپے فی لیٹر سے زیادہ ہے، برقی موٹر بائیکس ایک خوش آئند متبادل ہوگی۔

پاکستان میں برقی موٹر بائیکس کی ایک سرخیل کمپنی پاکزون نے کہا کہ اس سال پیٹرولیم کی قیمتوں میں ریکارڈ اضافے کی وجہ سے اس کی موٹر بائیکس کی فروخت میں اضافہ ہوا ہے۔

پاکزون کے اسلام آباد ریجن کے مینیجر بابر شہزاد نے عرب نیوز کو بتایا، "ہم نے گذشتہ ماہ صرف اسلام آباد کے علاقے میں چالیس سے زیادہ بائیکس فروخت کیں،" یہ کہتے ہوئے کہ یہ فروخت کے دوگنا سے بھی زیادہ ہے۔

کمپنی لیتھیم فاسفیٹ اور ڈرائی جیل کے دو بیٹری آپشنز کے ساتھ موٹر بائیکس پیش کر رہی ہے جنہیں عام 220 وولٹ سے گھر بیٹھے چارج کیا جا سکتا ہے۔

شہزاد نے کہا، "بیٹری تین سے چار گھنٹے میں تقریباً دو بجلی کے یونٹ فی چارج لیتی ہے اور ایک ہی چارج میں ستر کلومیٹر سے زیادہ سفر کرتی ہے،" اور بتایا کہ بائیک نے ایندھن کی لاگت کو ساٹھ فیصد تک کم کر دیا۔

شہزاد نے کہا، "برقی موٹر بائیکس کی نگہداشت کی لاگت تقریباً صفر ہے۔ یہ صفر شور اور صفر فضائی آلودگی کے ساتھ بے آواز ہیں۔"

انہوں نے کہا کہ ڈرائی جیل بیٹری کی زندگی دو سال ہے جس کی قیمت 60,000 روپے ($211) ہے جبکہ ایک لیتھیم فاسفیٹ بیٹری سات سال تک چلتی ہے اور اس کی قیمت 110,000 روپے ($387) ہے۔

لیکن صنعت کے ماہرین نے ای وی کو اپنانے میں درپیش کئی رکاوٹوں کو نمایاں کیا جن میں برقی گاڑیوں کی مہنگی ابتدائی قیمت شامل ہے جس کی زیادہ تر وجہ مہنگی بیٹری ہے جو ابتدائی قیمت کا 30 فیصد سے زیادہ ہے۔ صارفین کے درمیان دوسری تشویش ہے فاصلے کی فکر یا چارجنگ انفراسٹرکچر کی کمی کی وجہ سے منزل تک پہنچنے سے پہلے بجلی ختم ہونے کا خوف۔

عوامی چارجنگ اسٹیشنوں پر فاسٹ چارجرز گاڑیوں کے چارجنگ وقت کو کم تو کرتے ہیں لیکن ایسے اسٹیشنوں کی موجودہ تعداد مستقبل میں تیز رفتار چارجنگ کی بڑھتی ہوئی طلب کو پورا کرنے کے لیے ناکافی ہے اور لوگ اپنی ای ویز چارج کرنے کے لیے گھنٹوں لمبی قطاروں میں انتظار کرنے کو تیار نہیں ہوں گے۔

لمز کے محبوب الحق ریسرچ سینٹر کی جانب سے برقی بائیکس پر 2022 کے ایک مطالعے میں کہا گیا ہے کہ "ای ویز اپنانے کے عمل کو تیز کرنے کے لیے صارفین کو تحفظ کے احساس کی ضمانت ملنی چاہیے کہ انہیں قریبی علاقوں میں دستیاب چارجنگ انفراسٹرکچر تک رسائی حاصل ہوگی۔"

ای بائیک کے لیے گھر پر چارجنگ ایک اور آپشن ہے اگرچہ صارفین بجلی کے ہائی وولٹیج اور فریکوئنسی کے مسائل کے بارے میں فکر مند ہیں جس سے ان کی مہنگی گاڑیوں کو خطرہ ہو سکتا ہے۔ اس کے علاوہ بڑھتی ہوئی لوڈشیڈنگ کے ساتھ بجلی کی قابلِ اعتماد فراہمی کا عدم تحفظ ممکنہ خریداروں کے لیے باعثِ تشویش ہوگا۔

چونکہ مقامی مارکیٹ میں ابھی توسیع ہونا باقی ہے تو پرزہ جات اور مرمت اور دیکھ بھال کے لیے تکنیکی مہارت کی دستیابی بھی تشویش کا باعث بنی ہوئی ہے۔

پاکزون کے شہزاد نے کہا، "اس وقت ہمارے لیے سب سے بڑا چیلنج یہ ہے کہ بیٹریوں کی تیز رفتار چارجنگ کے لیے ایک نظام تیار کریں یا پھر پاکستان بھر میں موجودہ گیس اسٹیشنوں کے ساتھ چارجنگ اسٹیشن قائم کریں تاکہ ماحول دوست موٹر بائیکس کی فروخت کو بڑھایا جائے۔"

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں