پاکستان: وفاقی کابینہ کا فوری طور پر غزہ میں اسرائیلی بمباری رکوانے کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

’’نگراں وفاقی کابینہ نے غزہ میں نہتے فلسطینیوں پر اسرائیلی بمباری کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ غزہ پر اسرائیلی بمباری فوری طور پر بند کی جائے، مسئلہ فلسطین کو اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق حل کیا جائے اور فلسطین کی 1967 سے پہلے کی حیثیت بحال کی جائے۔‘‘

اس امر کا اظہار نگراں وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات مرتضیٰ سولنگی نے بدھ کے روز اسلام آباد میں وفاقی کابینہ کے اجلاس کے بعد نگراں وفاقی وزیر نجکاری فواد حسن فواد کے ہمراہ میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے کیا۔

نگراں وفاقی وزیر اطلاعات نے کہا کہ نگراں وزیراعظم انوار الحق کاکڑ کی زیر صدارت نگراں وفاقی کابینہ کے اجلاس میں غزہ میں اسرائیل کی جانب سے نہتے فلسطینیوں بالخصوص شہری آبادی پر بمباری کی شدید الفاظ میں مذمت کی گئی ہے۔

کابینہ نے اسرائیل کی جانب سے غزہ کے گھیرائو کے نتیجے میں پیدا ہونے والی گھمبیر صورتحال، خوراک اور پانی کی شدید قلت جیسے مسائل پر گہری تشویش کا اظہار کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ نگراں وفاقی کابینہ نے متفقہ طور پر اس بات پر زور دیا کہ مقبوضہ فلسطین میں حالیہ کشیدگی اسرائیل کی جانب سے سات دہائیوں پر محیط ناجائز قبضے، نہتے فلسطینیوں پر ظلم اور اقوام متحدہ سکیورٹی کونسل کی قراردادوں کی کھلم کھلا خلاف ورزیوں کا نتیجہ ہے۔

کابینہ نے مطالبہ کیا کہ فوری طور پر غزہ میں نہتے فلسطینیوں پر جاری بمباری روکی جائے اور ناجائز محاصرے کو ختم کر کے متاثرین تک بین الاقوامی امداد کو پہنچنے دیا جائے۔

نگراں وفاقی وزیر اطلاعات نے کہا کہ کابینہ نے حکومت پاکستان کے اصولی موقف کا اعادہ کیا کہ مسئلہ فلسطین کو اقوام متحدہ کی قراردادوں اور فلسطینی عوام کی امنگوں کے مطابق حل کر کے ایک آزاد فلسطینی ریاست کا قیام عمل میں لایا جائے جس کی سرحدیں 1967میں اسرائیل کے غاصبانہ قبضے سے پہلے کے مطابق ہوں اور اس کا دارالخلافہ القدس الشریف ہو۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں