مشرق وسطیٰ

اسرائیل فلسطینی عوام کی نسل کشی کر رہا ہے: نگران وزیر خارجہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

نگران وزیر خارجہ جلیل عباس جیلانی نے کہا ہے کہ ہم فلسطین کو فوری انسانی امداد فراہم کرنے کے لیے تیار ہیں، اسرائیل تاحال فلسطینیوں تک امداد پہنچانے کی اجازت نہیں دے رہا، اس حوالے سے مصری حکام سے رابطے میں ہیں۔

اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے جلیل عباس جیلانی نے کہا کہ فلسطین میں جو کچھ ہو رہا ہے اس کی مذمت کرتے ہیں، اسرائیل فلسطین کے عوام کی نسل کشی کر رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ فلسطین میں بہت افسوسناک صورتحال چل رہی ہے، وہاں لوگوں کے پاس کھانا، پانی نہیں ہے، فلسطین میں خواتین بچے، محفوظ نہیں ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ 70 سال سے اسرائیل نے فلسطین میں جبری قبضہ کیا ہوا ہے، اسرائیل کی ظلم و بربریت پاکستان کے لیے ناقابل قبول ہے، اس میں کوئی شک نہیں کہ اسرائیل، غزہ کے نہتے شہریوں پر بمباری کر رہا ہے۔

جلیل عباسی جیلانی نے کہا کہ ہم غزہ کی غیر قانونی ناکہ بندی کی مذمت کرتے ہیں، اسرائیل کو عالمی قوانین کی پابندی کرنی چاہیے، اسرائیل فلسطین سے متعلق اقوام متحدہ کی قراردادوں کا احترام کرے۔

ان کا کہنا تھا کہ 18 اکتوبر کو اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) کا ہنگامی اجلاس جدہ میں ہوگا، پاکستان کی طرف سے میں اجلاس کی نمائندگی کروں گا۔

انہوں نے کہا کہ او آئی سی کے اِس اجلاس کا واحد ایجنڈا یہی ہے کہ کس طرح اسرائیلی مظالم کو روکا جائے، فلسطینیوں کے حقوق کا کس طرح تحفظ کیا جائے، سیز فائر کس طرح کروایا جائے اور انتہائی ضروری انسانی امداد کس طرح وہاں پہنچائی جائے۔

نگران وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ پاکستان کی اسرائیل کے معاملے پر پوزیشن میں کوئی تبدیلی نہیں، مشرق وسطیٰ میں فلسطین کے مسئلے کا حل نکالنا انتہائی ناگزیر ہے، پاکستان کی فلسطین پر پوزیشن ماضی سے پیوستہ ہے۔

ان کا کہنا تھا، ’ہمارا مؤقف ہے اسرائیل لازمی بین الاقوامی قوانین، فلسطین پر اقوام متحدہ کی قراردادوں کی پاسداری کرے۔ ہم یہ بھی سمجھتے ہیں کہ یہ 70 سال کے فلسطینی زمین پر اسرائیل کے غیرقانونی قبضے کا نتیجہ ہے۔ اس معاملے میں پاکستان کا موقف واضح ہے۔ پاکستان 1967 سے قبل کی سرحدوں، القدس شریف درالحکومت کے ساتھ آزاد فلسطین ریاست چاہتا ہے۔‘

ان کا مزید کہنا تھا کہ او آئی سی اجلاس تمام حوالوں سے بہت بہترین فورم ہے، او آئی سی اجلاس کا مقصد تمام ممالک کا اسرائیل کے حوالے سے واضح مؤقف لینا ہے۔

ایک اور سوال کے جواب میں جلیل عباس جیلانی نے کہا، ’پاکستان فلسطین کو ضرور امداد بھیجے گا، ہم بالکل تیار ہیں، غزہ کے محاصرے میں فلسطین کے جو لوگ ہیں ابھی تک تو وہاں جانے نہیں دیا جا رہا، او آئی سی میں بھی بحث ہوگی کہ ہیومن کوریڈور کھولا جائے تاکہ امدادی پہنچائی جا سکے۔‘

جلیل عباس جیلانی نے کہا کہ ہم فلسطین کو فوری انسانی امداد فراہم کرنے کے لیے تیار ہیں لیکن اسرائیل تاحال فلسطینیوں تک امداد پہنچانے کی اجازت نہیں دے رہا۔

انہوں نے کہا کہ اس حوالے سے مصری حکام سے رابطے میں ہیں، دورہ سعودی عرب کے دوران خود وہاں کے ہم منصب سے ملاقات کروں گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں