پاکستان اور ایران موجودہ بحران کے دوران 90 فیصد افغان مہاجرین کی میزبانی کر رہے ہیں

مہاجرین کی تعداد میں اضافے کی بنیادی وجہ بین الاقوامی تنازعات ہیں جنہیں روکنے کی اشد ضرورت ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

بدھ کو اقوامِ متحدہ کی طرف سے جاری کردہ ایک رپورٹ کے مطابق پاکستان اور ایران 90 فیصد افغان مہاجرین کی میزبانی کرتے ہیں جبکہ افغانستان میں انسانی بحران کے کم ہونے کے کوئی آثار نظر نہیں آتے جس کی وجہ سے اس سال کے وسط تک اس کے 9.7 ملین شہری بے گھر ہو چکے ہیں۔

افغانستان نے اگست 2021 میں تقریباً دو عشروں تک جاری رہنے والی جنگ کے خاتمے کا مشاہدہ کیا جب ریاست ہائے متحدہ امریکہ کی قیادت میں بین الاقوامی افواج ملک سے نکل گئیں اور طالبان نے کابل پر قبضہ کر کے اور اپنی انتظامی رسائی کو دوسرے شہروں تک بڑھا کر اقتدار دوبارہ حاصل کر لیا۔

جبکہ تنازعے کی شدت بڑی حد تک کم ہو چکی ہے تو جبری نقلِ مکانی پر اقوامِ متحدہ کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ بڑھتی ہوئی قیمتیں، گرتی ہوئی معیشت اور خواتین اور لڑکیوں کے حقوق پر مسلسل بڑھتی ہوئی پابندیاں معاشرتی اور معاشی بدحالی کا باعث بن رہی ہیں۔

افغان مہاجرین کی کل تعداد عالمی سطح پر 5.7 ملین سے بڑھ کر 6.1 ملین ہو گئی ہے، رپورٹ میں اس کی نشان دہی کرتے ہوئے کہا گیا، "غربت مقامی مسئلہ ہے، 40 ملین سے زائد آبادی کے نصف حصے کو شدید غذائی عدم تحفظ کا سامنا ہے اور 2023 کے وسط تک ملک میں تقریباً 3.3 ملین لوگ تاحال اپنے گھروں سے بے گھر ہیں۔"

رپورٹ میں مزید کہا گیا، "اسلامی جمہوریہ ایران (3.4 ملین) اور پاکستان (2.1 ملین) نے مشترکہ طور پر تمام افغان مہاجرین کے 90 فیصد کی میزبانی کی۔"

اقوامِ متحدہ نے اس بات پر بھی روشنی ڈالی کہ سال کی پہلی ششماہی کے دوران دنیا بھر میں مہاجرین کی کل تعداد میں 1.2 ملین یا 3 فیصد اضافہ ہوا ہے جس کی وجہ سوڈان جیسی جگہوں پر تنازعات پھوٹنا اور یوکرین میں جاری جنگ ہے۔

جون کے آخر تک دنیا بھر میں ایک اندازے کے مطابق 35.8 ملین پناہ گزین تھے جن میں سے بیشتر کئی سالوں سے بے گھر ہیں۔

اقوامِ متحدہ کے ہائی کمشنر برائے مہاجرین فلیپو گرانڈی نے کہا، "دنیا کی توجہ اب - بجا طور پر - غزہ میں ہونے والی انسانی تباہی پر ہے۔ لیکن عالمی سطح پر پھیلنے اور بڑھنے والے کئی تنازعات معصوم جانیں ضائع اور لوگوں کی بیخ کنی کر رہے ہیں۔"

انہوں نے مزید کہا، "تنازعات کو حل کرنے یا نئے تنازعات کو روکنے میں بین الاقوامی برادری کی نااہلی نقلِ مکانی اور بدحالی کا باعث بن رہی ہے۔ ہمیں اپنے گریبان میں جھانکنا، تنازعات کو ختم کرنے کے لیے مل کر کام کرنا اور پناہ گزینوں اور دیگر بےگھر افراد کو گھر واپس لوٹنے یا اپنی زندگی دوبارہ شروع کرنے کی اجازت دینا چاہیے۔"

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں