گوادر: سکیورٹی فورسز کی گاڑی پر دہشت گردوں کا حملہ، پاک فوج کے 14 اہلکار شہید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

بلوچستان کے ضلع گوادر میں سکیورٹی فورسز کی گاڑی پر دہشت گردوں کے حملے میں پاک فوج کے 14 اہلکار شہید ہو گئے۔

پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ سکیورٹی فورسز کی گاڑی ضلع گوادر میں پسنی سے اورماڑہ جا رہی تھی کہ گھات لگائے دہشت گردوں نے حملہ کردیا۔

بیان میں کہا گیا کہ بدقسمت واقعے میں 14 فوجی اہلکار شہید ہو گئے ہیں۔

آئی ایس پی آر نے بتایا کہ علاقے میں پاک فوج کی جانب سے آپریشن جاری ہے اور اس بدترین واقعے کے ذمہ داروں کو گرفتار کر کے انصاف کے کٹہرے میں لایا جائے گا۔

مزید بتایا گیا کہ پاکستان کی مسلح افواج ملک سے دہشت گردی کا ناسور ختم کرنے کے لیے پرعزم ہیں اور بہادر جوانوں کی اس طرح کی قربانیوں سے ہمارا عزم مزید مضبوط ہوتا ہے۔

سیاسی قیادت کی مذمت

نگران وزیرخارجہ جلیل عباس جیلانی نے گوادر میں پیش آنے والے واقعے کی شدید مذمت کی اور کہا کہ اس طرح کے واقعات قابل مذمت ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ہماری دعائیں شہدا کے اہل خانہ کے ساتھ ہیں اور زخمیوں کی صحت یابی کے لیے دعاگوہ ہیں، پاکستان دہشت گردوں کے خلاف کھڑا رہے گا۔

بلوچستان کے نگران وزیر اعلیٰ علی مردان خان ڈومکی نے بھی دہشت گردوں کے حملے کی مذمت کی اور بیان میں کہا کہ لوگوں کے جان و مال کی حفاظت پر مامور جوانوں پر حملہ بزدلانہ حرکت ہے۔

علی مردان ڈومکی نے واقعے میں شہید ہونے والے جوانوں کو خراج عقیدت پیش کیا اور ان کے اہل خانہ سے تعزیت کا اظہار کیا اور کہا کہ دہشت گردوں کا حملہ صوبے کا امن سبوتاژ کرنے کی مذموم کوشش ہے۔

انہوں نے کہا کہ بڑی قربانیوں کے بعد حاصل کیے گئے امن کو خراب کرنے کی کسی صورت اجازت نہیں دی جائے گی۔

کالعدم تحریک طالبان (ٹی ٹی پی) کی جانب سے گزشتہ برس نومبر میں حکومت کے ساتھ جنگ بندی ختم کرنے کے اعلان کے بعد پاکستان میں خاص طور پر خیبرپختونخوا اور بلوچستان میں دہشت گردی کے واقعات میں اضافہ ہوا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں