فلسطین اسرائیل تنازع

فلسطین پر او آئی سی کا ہنگامی اجلاس، پاکستانی وزیر اعظم سعودی عرب جائیں گے

اسلامی تعاون تنظیم کے مطابق 12 نومبر 2023 کو ریاض میں ہونے والے سربراہی اجلاس میں فلسطینی عوام کے خلاف اسرائیلی جارحیت پر تبادلہ خیال کیا جائے گا۔

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

پاکستان کی وزارت خارجہ کی ترجمان ممتاز زہرا بلوچ نے کہا ہے کہ نگران وزیراعظم انوار الحق کاکڑ رواں ہفتے سعودی عرب میں فلسطین کی صورتحال پر اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) کے ہنگامی سربراہ اجلاس میں شرکت کریں گے۔

اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) نے پیر کو کہا تھا کہ فلسطین کی صورت حال پر سعودی عرب کے دارالحکومت ریاض میں اتوار (12 نومبر) کو ایک غیر معمولی اجلاس منعقد کیا جائے گا۔

او آئی سی کے مطابق ’سربراہ اجلاس میں فلسطینی عوام کے خلاف اسرائیلی جارحیت پر تبادلہ خیال کیا جائے گا۔‘


غزہ پر اسرائیلی حملے ایک ماہ سے جاری ہیں اور فلسطینی محکمہ صحت کے مطابق ان حملوں میں شہادتوں کی تعداد 10 ہزار سے تجاوز کر گئی ہے جن میں سے چار ہزار سے زائد بچے ہیں۔

پاکستان اسرائیل کے غزہ پر جاری حملوں کی فوری طور پر بند کرنے کا مطالبہ کرتا آ رہا ہے اور اقوام متحدہ میں پاکستان کے مستقل نمائندے نے منیر اکرم نے رواں ہفتے ایک انٹرویو میں کہا ہے کہ اسرائیل قابض قوت ہونے کی وجہ سے اپنے دفاع کے حق کا دعوی نہیں کر سکتا ہے۔

عرب نیوز کے حالات حاضرہ کے پروگرام ’فرینکلی سپیکنگ‘ میں بات کرتے ہوئے سینیئر سفارت کار منیر اکرم نے کہا کہ ’یہ بالکل وہی ہے جو ہم نے سلامتی کونسل میں کہا ہے۔ اگر آپ پہلا بیان دیکھیں جو پاکستان نے اس پر دیا تھا، جب یہ تنازعہ شروع ہوا تھا، جس میں واضح طور پر کہا گیا تھا کہ ایک طاقت جو دوسرے لوگوں پر قابض ہے، وہ ان لوگوں کے خلاف اپنے دفاع کے حق کا دعویٰ نہیں کر سکتی جن پر وہ قابض ہے۔‘.

غزہ میں جنگ بندی کے اپنے مطالبے کا اعادہ کرتے ہوئے، منیر منیر اکرم نے عالمی برادری پر زور دیا کہ وہ اقوام متحدہ کے مرکز اور بین الاقوامی قانون کے اطلاق میں عدم توازن کو دور کرے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں