پاکستانی اسٹارٹ اپ ایک ملین ڈالر کی فنڈنگ سے مینا خطے میں کاروبار کیلئے تیار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

ایک پاکستانی ڈیجیٹل اسٹارٹ اپ نے ایک ملین ڈالر کی فنڈنگ حاصل کرنے کے بعد مشرق وسطی اور شمالی افریقہ (MENA) یعنی مینا کے خطے میں کاروبار کرنے کیلئے پر تول لئے ہیں۔

پاکستانی ڈیجیٹل فریٹ فارورڈنگ اسٹارٹ اپ،وائج فریٹ نے پیر کو اعلان کیا کہ اس نے پاکستان میں شپنگ کے شعبہ میں انقلاب لانے اور مینا خطے میں کاروبار کو پھیلانے کیلئے پری سیڈ فنڈنگ کے طور پر ایک ملین ڈالر سے زیادہ کی رقم حاصل کی ہے۔انڈس ویلی کیپٹل نے اس سرمایہ کاری کے حصول میں بنیادی کردار ادا کیا جو کہ ملک میں روایتی عالمی شپنگ کے پیچیدہ نوعیت کے کاروبار کو آسان بنانے کے لیے وائج فریٹ کے وژن پر بڑھتے ہوئے اعتماد کا مظہر ہے۔

وائج فریٹ نے کہا کہ اس سرمایہ کی اسٹریٹیجک لحاظ سے فراہمی، پاکستانی برآمد کنندگان کے لیے ذرائع نقل حمل کی صنعت کو بہتری کی سمت میں سفر کیلئے ایک سنگ میل کی حیثیت رکھتا ہے۔

پاکستانی ڈیجیٹل اسٹارٹ اپ برآمد کنندگان کو جدید ٹیکنالوجی کے ساتھ ایک مکمل بین الاقوامی طور پر جڑے شپنگ کے شعبہ کیلئے جامع نوعیت کا حل پیش کرتا ہے۔

اسٹارٹ اپ کا کہا کہ وہ پاکستان میں کاروبار کو مضبوط بنیاد کے ساتھ شروع کرتے ہوئے مشرق وسطیٰ اور شمالی افریقہ کے ریجن میں لاجسٹک کے شعبہ کو آگے لیجانے کیلئے اہم کردار نبھانے کیلئے نظریں گاڑ لی ہیں۔ کمپنی نے کہا کہ نئی سرمایہ کاری اسے جدیدٹیکنالوجی پر مبنی پلیٹ فارم کے ذریعےپاکستان کی بڑھتی ہوئی تجارتی منڈی کی ضرورتوں کے مطابق برآمدی نقل و حمل کے عمل کو بہتر طریقے سے انجام دینے اور آگے بڑھانے میں مدد ملے گی۔

انڈس ویلی کیپیٹل کے بانی عاطف اعوان نے کہاکہ برآمدات میں اضافہ پاکستان کے لیے ایک سلگتا ہوا مسئلہ ہے ۔ اس حوالے سے دوسرے مسائل کے علاوہ غیر موثر عالمی شپنگ لائنز کی فراہمی بھی ایک اہم رکاوٹ ہے۔ پاکستان میں کسی بھی ادارے کیلئے عالمی مال برداری کو آسان بنانے کا وائج فریٹ کا وژن، خاص طور پر نئے اور چھوٹے برآمد کنندگان کیلئے ، واقعی ابھر کر سامنے آنے کے مترادف ہے۔ ہم اس حوالے سے ان کاروباری اداروں کے ساتھ شراکت کے لیے پرجوش ہیں۔

وائج فریٹ کے شریک بانی، عمر مختار نے کہا کہ وہ انتہائی پر عزم ہیں کہ سرمایہ کاروں نے برآمدی شپنگ کے عمل کو ڈیجیٹلائز کرنے اور آسان بنانے کیلئے انکی کمپنی سے اشتراک کیا۔

مختار یونیورسٹی کالج لندن اور لندن سکول آف اکنامکس سے فارغ التحصیل ہیں اور پاکستان کے مسابقتی ماحول میں مختلف کمپنیوں کے ساتھ کام کا وسیع تجربہ رکھتے ہیں۔

انکے مطابق پاکستان میں فریٹ فارورڈنگ کے روایتی عمل میں شفافیت کا فقدان اور کسٹم کے پیچیدہ طریقہ کار جیسے چیلنجز کا سامنا ہے، جو کہ کاروبار میں بہتری لانے کی کوششوں میں رکاوٹ اور اس کے اخراجات بڑھنے کا باعث بنتے ہیں۔

کمپنی نے ڈیجیٹل پلیٹ فارم کے بارے میں بتایا کہ تمام شپنگ آپریشنز کو ایک ہی ڈیش بورڈ پر ضم کرکے یہ آن لائن نظام کلائنٹس کو کارگو پر ہمہ وقت نگرانی کا موقع فراہم کرتا ہے۔ یہ ایک شفاف، موثر، اور کم لاگت کی وجہ سے موثر ترین شپنگ کا تجربہ فراہم کرتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں