ایشیائی ترقیاتی بنک سے پاکستان کے لیے 250 ملین ڈالر قرضہ کی منظوری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایشیائی ترقیاتی بنک نے پاکستان کے لیے 250 ملین ڈالر کا قرضہ منظور کیا ہے۔ یہ رقم بجلی کی ٹرانسمیشن کا نظام بہتر بنانے کے لیے صوبہ پنجاب اور صوبہ خیبرپختونخوا میں خرچ کی جائے گی۔

پاکستان کے پاس بجلی کی عوامی ضروریات پوری کرنے لیے کافی اہلیت موجود ہے۔ لیکن اس جنوبی ایشیائی ملک کے پاس اپنے ٹرانسمیشن کے نظام کو بہتر بنانے کے لیے وسائل دستیاب نہیں ہیں۔ ٹرانسمیشن کے نظام کو بہتر بنانے کے لیے نئے انفراسٹرکچر کی ضرورت ہے۔ اس وجہ سے لائن لوسز کی صورت میں پاکستان کو ہر سال ایک بڑا نقصان برداشت کرنا پڑتا ہے۔

اس سال جنوری میں بھی ٹرانسمیشن لائن کی کمزوری کی وجہ سے پورے ملک میں 'بلیک آوٹ' کی صورت پیدا ہوگئی تھی کہ اچانک پاکستان کے نیشنل گرڈ نے کام کرنا چھوڑ دیا تھا۔

اس کی بڑی وجہ یہ تھی کہ موجودہ ٹرانسمیشن انفراسٹرکچر طلب اور رسد کی موجودہ صورتحال کا متحمل نہیں ہو سکتا۔
جنوری میں پورے ملک میں ہونے والا 'بلیک آوٹ' تین ماہ کے اندر دوسرا بڑا 'بلیک آوٹ' تھا۔

ایشیائی ترقیاتی بینک نے پاکستان کے لیے یہ قرضہ منظور کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ قرضہ ٹرانسمیشن سسٹم کی مضبوطی کے پراجیکٹ پر خرچ کرنے کے لیے ایک حصہ ہوگا۔ جس کے نتیجے میں 220 کلو واٹ اور 500 کلو واٹ کی ٹرانسمیشن لائن کو مربوط کیا جائے گا تاکہ لائن لوسز کو کم کیا جاسکے۔

واضح رہے پاکستان 1966 میں قائم ہونے والے ایشیائی ترقیاتی بینک کا بانی ممبر ہے۔ کل ممبران کی تعداد 68 ہے۔ جس میں سے 59 اسی علاقے سے تعلق رکھتے ہیں۔

اس بنک نے پاکستان کو 52 ارب ڈالر کے پبلک اور پرائیوٹ سیکٹر کے لیے قرض دیے ہیں۔ جس کے نتیجے میں ملک کے اندر انفراسٹرکچر کی بہتری ہوئی، توانائی کے شعبے میں منصوبے آگے بڑھے۔ نیز ٹرانسپورٹ نیٹ ورکس، سماجی خدمات اور فوڈ سکیورٹی کے شعبے میں قرضہ لے کر رقوم لگائی گئیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں