شیما کرمانی کو فلسطین کے لیے آواز اٹھانے پر برٹش ہائی کمیشن کی تقریب سے نکال دیا گیا

پاکستان کی معروف کلاسیکل ڈانسر شیما کرمانی نے بتایا کہ انہیں ’فلسطین کے حق میں بات کرنے پر بے رخی اور سختی کے ساتھ تقریب سے جانے کا کہا گیا تو میں نے وہاں کہا کہ میں خود چلی جاتی ہوں۔‘

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

پاکستان کی معروف کلاسیکل ڈانسر، سماجی کارکن اور ثقافتی تنظیم ’تحریک نسواں‘ کی بانی شیما کرمانی کا کہنا ہے کہ انہیں جمعے کو کراچی میں برٹش ہائی کمیشن کی ایک تقریب کے دوران فلسطین کے حق میں بات کرنے پر وہاں سے جانے کا کہا گیا۔

شیما کرمانی نے میڈیا کو بتایا ہے کہ وہ 17 نومبر کو کراچی میں برٹش ہائی کمیشن کی ایک تقریب میں موجود تھیں جہاں انہوں نے فلسطین کے حق میں بات کی تو انہیں وہاں سے جانے کا کہہ دیا گیا۔

ان کا کہنا ہے کہ ’مغرب ہمیشہ آزادی اظہار رائے کی بات کرتا ہے، یہی سوچ کر میں نے یہ بات کی لیکن مجھے اندازہ نہیں تھا کہ ایسا ہو گا۔‘

شیما نے بتایا کہ انہیں ’فلسطین کے حق میں بات کرنے پر بے رخی اور سختی کے ساتھ تقریب سے جانے کا کہا گیا تو میں نے وہاں کہا کہ میں خود چلی جاتی ہوں۔‘

انہوں نے مزید کہا کہ ’میں سمجھتی ہوں کہ اس وقت غزہ میں جو ہو رہا ہے وہ انسانیت سوز ہے، یہ ساری حکومتیں خاموش ہیں عرب ممالک بھی خاموش ہیں۔‘

شیما کہتی ہیں کہ ’فلسطین میں نسل کشی کی جا رہی ہے اور میں فلسطین کے حق میں اپنی آواز بلند کرتی رہوں گی۔‘

اس حوالے سے میڈیا کے توسط سے برطانوی ہائی کمیشن کے ترجمان کا کہنا تھا کہ ’ہمیں افسوس ہے کہ ایک مہمان کی وجہ سے برطانوی ڈپٹی ہائی کمشنر کی پاکستان میں موسمیاتی تبدیلی کے بارے میں ایک اہم تقریر کو روکنا پڑا۔‘

برطانوی ہائی کمیشن کے ترجمان نے کے مطابق ’ایک مہمان کو چیخ کر خلل ڈالنے سے منع کیا گیا، مگر اپنی مرضی سے انہوں نے رخصت لی اور بعد میں ہائی کمیشن کے عملے سے معذرت کی۔‘

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں