بلوچستان کی صوبائی حکومت بولان میڈیکل کالج میں فلسطینی طلباء کی کفالت کرے گی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

بلوچستان کی حکومت نے بدھ کے روز اعلان کیا ہے کہ وہ جنوب مغربی پاکستان کے صوبے کی ایک اعلیٰ میڈیکل یونیورسٹی میں زیرِ تعلیم فلسطینی طلباء کے اخراجات برداشت کرے گی۔

پاکستان کے جنوبی صوبہ سندھ کی حکومت کی طرف سے تمام سرکاری تعلیمی اداروں میں فلسطینی طلباء کو ٹیوشن فیس اور ہاسٹل واجبات سے مستثنیٰ کرنے اور غزہ میں جنگ کے پیشِ نظر مشاہرہ اور وظائف فراہم کرنے کی ہدایت کی گئی تھی جس کے تقریباً دس دن بعد بلوچستان حکومت کا یہ اعلان سامنے آیا ہے۔

صوبائی دارالحکومت کوئٹہ کے ایک میڈیکل اسکول کا حوالہ دیتے ہوئے صوبائی وزیرِ اعلیٰ کے دفتر نے ایک بیان میں کہا، "بلوچستان حکومت نے بولان میڈیکل کالج میں زیرِ تعلیم فلسطین اور غزہ کے 11 طلباء کے تعلیمی اخراجات اور کفالت کی ذمہ داری لی ہے۔"

بیان میں مزید کہا گیا، "تمام طلباء [فلسطین سے] اپنے اہلِ خانہ سے رابطہ نہ ہونے کی وجہ سے مالی مشکلات اور مسائل کا شکار تھے۔ صوبائی حکومت ان کی مکمل معاونت اور تعلیم کے اخراجات برداشت کرے گی۔"

پاکستان میں فلسطینی سفارتی مشن کے مطابق اس وقت 300 سے زائد فلسطینی طلباء پاکستان بھر کی یونیورسٹیوں میں داخل ہیں جن میں سے 50 سندھ کے سرکاری تعلیمی اداروں میں زیرِ تعلیم ہیں۔

گذشتہ برسوں کے دوران 50,000 سے زائد فلسطینی شہری پاکستان کے تعلیمی اداروں سے فارغ التحصیل ہو چکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں