ہر طرف گھنٹیوں کی آواز: کراچی میں سینکڑوں افراد کی کرسمس’امن ریلی‘

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

پاکستان کے جنوبی بندرگاہی شہر کراچی میں کرسمس کی تھیم والے ملبوسات میں سینکڑوں افراد نے اتوار کو مسیحی تہوار کے آغاز کے موقع پر ’’امن ریلی‘‘ میں حصہ لیا اور ڈھول کی تھاپ پر گانا گایا اور رقص کیا۔

دنیا بھر کے لاکھوں مسیحی یقین رکھتے ہیں کہ یسوع مسیح 25 دسمبر کو پیدا ہوئے تھے اور اس دن کو مذہبی اور ثقافتی تہواروں کے ساتھ مناتے ہیں۔ کراچی میں مسیحی برادری نے آئندہ پروگرام کا آغاز جوش و خروش کے ساتھ کیا اور شہر کے جیکب لائنز روڈ سے کراچی پریس کلب تک ایک بڑی ریلی میں شرکت کی۔

ریلی کے شرکاء میں سے ایک 18 سالہ سرفراز ولیم نے اے ایف پی کو بتایا، "آج کی ریلی امن، محبت اور اخوت کی ریلی ہے۔ کرسمس محبت اور خوشحالی پھیلانے کا نام بھی ہے۔ تنظیم کی ٹیم کی طرف سے ہم تمام پاکستان کو کرسمس کی بہت بہت مبارکباد دیتے ہیں۔" اس موقع پر کاریں اور بسیں کرسمس کی آرائش سے مزین تھیں۔

ریلی کے ایک اور شریک 20 سالہ شکیل مسیح نے کہا، پاکستان کی مسیحی برادری دنیا میں خوشیاں پھیلانا چاہتی ہے۔

انہوں نے اے ایف پی کو بتایا، "اس ملک کے ہم تمام مسیحی محبت اور امن پھیلانا اور اخوت سے رہنا چاہتے ہیں۔ میں دنیا کو اپنا پیغام دینا چاہتا ہوں کہ کرسمس وہ خوشی ہے جسے ہم پھیلانا چاہتے ہیں۔"

یہ واقعہ اگست میں پاکستان میں جڑانوالہ ٹاؤن میں ایک عیسائی برادری پر مسلمانوں کے مشتعل ہجوم کے حملے کے کئی مہینوں بعد پیش آیا جس میں متعدد گھروں کو آگ لگا دی گئی اور مسیحی برادری کے ارکان پر قرآن پاک کی بے حرمتی کا الزام لگایا گیا تھا۔

پولیس نے بتایا کہ یہ واقعہ صنعتی شہر فیصل آباد کے جڑانوالہ ٹاؤن میں پیش آیا جب دو مسیحیوں پر توہینِ مذہب کا الزام لگایا گیا۔

پاکستان کے بانی محمد علی جناح نے اگست 1947 میں دستور ساز اسمبلی کو بتاتے ہوئے ملک میں مذہبی آزادی کا وعدہ کیا تھا کہ تمام شہری اپنی عبادت گاہوں میں جانے کے لیے آزاد ہوں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں