اسلام آباد ہائی کورٹ کا سائفر کیس ٹرائل 11 جنوری تک روکنے کا حکم

عدالت نے سائفر کیس کے ان کیمرہ ہونے والے ٹرائل پر سوالات اٹھا دیئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسلام آباد ہائی کورٹ نے بانی پی ٹی آئی کی سائفر ٹرائل پر حکم امتناع کی درخواست منظور کرتے ہوئے ٹرائل11جنوری تک روکنے کا حکم دے دیا۔

عمران خان کی سائفر کیس کی ان کیمرہ کارروائی کے خلاف درخواست پر سماعت اسلام آباد ہائی کورٹ کے جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب نے کی۔

جسٹس میاں گل حسن نے دوران سماعت کہا کہ اس معاملے میں اہم آئینی ایشوز سامنے آئے ہیں عدالت ان کو دیکھے گی۔ سپریم کورٹ نے اس کیس میں اپنے فیصلے میں بھی مواد کو ناکافی قرار دیا تھا۔

عدالت نے کیس کی سماعت 11جنوری تک کے لئے ملتوی کردی۔

اس سے قبل سپریم کورٹ نے سابق وزیر اعظم عمران خان اور ان کی جماعت پی ٹی آئی کے سینئیر رہنما اور سابق وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کی سائفر کے مقدمے میں ضمانتیں منظور کر لی تھی۔ جمعے کے روز سماعت کے اختتام پر عدالت نے دونوں ملزمان کو دس لاکھ روپے کے الگ الگ ضمانتی مچلکے جمع کروانے کا حکم دیا۔

خیال رہے کہ سائفر کیس میں ضمانت ملنے کے بعد عمران خان کے انتخابات میں حصہ لینے کے راستے کی ایک بڑی رکاوٹ صاف ہوئی ہے تاہم وہ ابھی بھی توشہ خانہ اور القادر ٹرسٹ کے مقدمات میں گرفتار ہیں۔ الیکشن کمیشن نے عام انتخابات میں حصہ لینے کے لیے کاغزات نامزدگی جمع کرانے کی آج جمعے کے روز کی حتمی تاریخ میں دو دن کی توسیع کا اعلان کیا ہے اور امید کی جارہی ہے کہ اس سے عمران خان اور نواز شریف کو انتخابات میں حصہ لینے کےلیے اضافی وقت ملے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں