چیئرمین تحریک انصاف سمیت متعدد امیدواروں کے کاغذات نامزدگی مسترد

لاہور میں این اے-130 سے نواز شریف کے کاغذات نامزدگی منظور، یاسمین راشد کے مسترد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

الیکشن کمیشن نے پاکستان تحریک انصاف کے بانی اور سابق وزیر اعظم عمران خان کے ساتھ ساتھ پی ٹی آئی کے سینئر رہنما شاہ محمود قریشی کے بھی کاغذات نامزدگی مسترد کردیے۔

لاہور سے قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 122 سے بانی تحریک انصاف عمران خان کے کاغذات نامزدگی مسترد کردیے گئے۔

ہفتہ کے روز ریٹرننگ افسر محمد اقبال نے بانی تحریک انصاف کے کاغذات نامزدگی مسترد کرنے کا فیصلہ سنایا۔

بانی پی ٹی آئی کےکاغذات نامزدگی دو بنیادوں پر مسترد کیے گئے جس میں سے پہلی وجہ یہ تھی کہ بانی پی ٹی آئی کا تائید کنندہ حلقہ این اے-122 کا رجسٹرڈ ووٹر نہیں۔

اس کے علاوہ بانی پی ٹی آئی کے سزا یافتہ ہونے کے باعث بھی ان کے کاغذات کو مسترد کیا گیا۔

بانی پی ٹی آئی عمران خان کے کے کاغذات کو مسلم لیگ (ن) کے امیدوار میاں نصیر نے چیلنج کیا تھا۔

تحریک انصاف کے وکیل نے کہا کہ بانی پی ٹی آئی کے کاغذات نامزدگی مسترد ہونے پر ٹریبونل میں اپیل دائر کریں گے کیونکہ ہم نے ہم نےاین اے۔122 کے ریٹرننگ افسر پر پہلے ہی عدم اعتماد کا اظہار کر دیا تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ ریٹرننگ افسر کی اپنی انکوائری چل رہی ہے اور ان پر کرپشن کے الزامات ہیں۔

دریں اثنا الیکشن کمیشن آف پاکستان نے لاہور میں قومی اسمبلی کے حلقہ این اے۔130 سے مسلم لیگ(ن) قائد نواز شریف کے کاغذات نامزدگی مسترد کردیے گئے جبکہ اسی حلقے سے تحریک انصاف کی رہنما یاسمین راشد کے کاغذات نامزدگی مسترد کردیے گئے۔

این اے-130 سے نواز شریف کے کاغذات نامزدگی پر کسی نے اعتراض نہیں کیا۔ دوسری جانب این اے۔130 سے تحریک انصاف کی سینئر رہنما یاسمین راشد کے کاغذات نامزدگی مسترد کردیے گئے۔ اس کے علاوہ تحریک انصاف کے رہنما حماد اظہر کے بھی کاغذات نامزدگی لاہور سے صوبائی اسمبلی کے حلقہ پی پی-172 سے مسترد کر دیے گئے۔

اطلاعات کے مطابق تحریک انصاف کے رہنما شاہ محمود قریشی کے کاغذات نامزدگی ملتان سے قومی اسمبلی کے حلقہ این اے۔151 اور تھرپارکر سے قومی اسمبلی کے حلقہ این اے-214 سے مسترد کردیے گئے۔

ریٹرننگ افسر نے این اے۔151 سے زین قریشی اور مہر بانو قریشی کے کاغذات نامزدگی مسترد بھی مسترد کردیے۔

صرف یہی نہیں بلکہ تھرپارکر کے این اے۔214 سے شاہ محمود قریشی اور زین قریشی کے کاغذات نامزدگی مسترد کردیے گئے۔

تھرپارکر:ریٹرننگ آفیسر آصف علی خاصخیلی نے کہا کہ دونوں امیدواروں کے نامزدگی فارم ڈیوز سرٹیفیکیٹ نہ ہونے کے باعث مسترد کیے گے ہیں۔

پی ٹی آئی کے رہنماؤں نے تھرپارکر سے کاغذات نامزدگی مسترد ہونے کے فیصلے کو چیلنج کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

اس کے علاوہ پی ٹی آئی رہنما اور سابق ڈپٹی اسپیکر قاسم سوری کے کاغذات نامزدگی بھی مسترد کر دیے گئے۔

کوئٹہ سے قومی اسمبلی کے حلقہ این اےأ263 سے کاغذات نامزدگی جمع کرانے والے قاسم سوری کے کاغذات مسترد کردیے گئے۔

ریٹرننگ افسر نے موقف اپنایا کہ قاسم سوری نادہندہ، اور اشتہاری ہیں اور تفصیلی فیصلہ قاسم سوری کے وکلا کو دیا جائے گا۔

واضح رہے کہ اس کے علاوہ بھی پی ٹی آئی کے متعدد رہنماؤں کے کاغذات نامزدگی مسترد کیے جا چکے ہیں۔

اس سے قبل تحریک انصاف کے رہنما علی محمد خان نے دعویٰ کیا تھا کہ ان کے آبائی علاقے مردان سے ان کے کاغذات نامزدگی برائے این اے 23 بغیر کسی قانونی اور مناسب وجہ کے مسترد کر دیے گئے۔

علی محمد خان نے کہا کہ اس غیر قانونی اور غلط فیصلے کے خلاف ہائی کورٹ الیکشن ٹریبونل میں اپیل کریں گے، اپنے رب سے امید ہے انصاف ملے گا۔

اس کے علاوہ اٹک کے حلقہ این اے 50 سے پی ٹی آئی رہنما زلفی بخاری کے کاغذات نامزدگی مسترد کر دیے گئے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں