اسلام آباد ہائی کورٹ: نیب سے سزا یافتہ فرد کی 10 سالہ نااہلی کی مدت بحال

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

اسلام آباد ہائی کورٹ نے نیب سے سزا یافتہ فرد کے لیے عوامی منصب سے 10 سالہ نااہلی کی مدت بحال کر دی۔

اسلام آباد ہائی کورٹ کے جسٹس محسن اختر کیانی اور جسٹس ثمن رفعت امتیاز نے قومی احتساب بیورو [نیب] کی جانب سے سزا یافتہ کی 10 سالہ نااہلی کم کر کے پانچ سال کرنے کے فیصلے کے خلاف اپیل پر سماعت کرتے ہوئے سزا یافتہ فرد کے لیے عوامی منصب سے 10 سالہ نااہلی کی مدت بحال کر دی۔

دوران سماعت نیب کے پراسیکیوٹر نے اپنے دلائل میں کہا کہ اس سے قبل سپریم کورٹ میں سنے جانے والے کیس میں فائق علی جمالی کی سزا برقرار رکھی گئی۔ نیب قانون کے مطابق نااہلی 10 سال رہے گی۔

نیب پراسیکیوٹر نے دلائل میں کہا کہ سزا یافتہ فرد کے جیل سے رہا ہونے کے بعد اس کی نااہلی کی مدت شروع ہوگی۔

بعد ازاں اسلام آباد ہائی کورٹ کے سنگل بینچ کا فیصلہ ڈویژن بنچ نے معطل کر دیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں