عالمی تحفظ صحت کانفرنس، غیرسیاسی بنیادوں پر سہولتوں کے لیے زور دیں گے: پاکستان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

پاکستان کے نگران وزیر وفاقی وزیر صحت ندیم جان نے کہا ہے پاکستان عالمی سطح پر صحت کے مسائل سے غیر سیاسی بنیادوں پر نمٹنے کے لیے یہ تجویز دینا چاہتا ہے تاکہ اسرائیلی بمباری سے متاثر ہونے والے لاکھوں فلسطینیوں اور ہزاروں زخمیوں کو طبی امداد فراہم کی جا سکے۔

واضح رہے غزہ میں تین ماہ سے زیادہ عرصے سے جاری بمباری کی وجہ سے ایک طرف زخمیوں کی تعداد بہت زیادہ ہے اور دوسری جانب اس بمباری نے غزہ کے ہسپتالوں کو بمباری یا ناکہ بندی سے عملاً ناکارہ بنا دیا ہے۔

پاکستان کی طرف سے یہ تجویز اگلے ہفتے میں منعقد ہونے والی 'گلوبل ہیلتھ سیکیورٹی کانفرنس' میں پیش کی جائے گی۔

یہ عالمی تحفظ صحت کانفرنس دو دن اسلام آباد میں جاری رہے گی۔ جس میں دننیا سے نمائندوں کی آمد متوقع ہے۔ صحت سے متعلق تنظیموں اور سول سوسائٹی کے نمائندوں کی بھی شرکت متوقع ہے۔

نگران وزیر صحت نے کہا 'ہم چاہتے ہیں کہ صحت کے شعبے کو غیر سیاسی ہی رکھا جائے، یہی اس کانفرنس کی بنیادی 'تھیم' ہے۔ ہم سمجھتے ہیں کہ صحت کی سہولیات دنیا کی تمام 'کمیومنٹیز' تک پہنچنی چاہییں اور ان دنوں بطور غزہ کے لوگوں کو ملنی چاہییں جو مسلسل بمباری کی وجہ سے بے گھر اور بد ترین مشکلات کا شکار ہیں۔

نگران وفاقی وزیر نے غزہ میں بمباری فوری روکنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا معصوم شہریوں کو انتقام کا نشانہ بنانا بند ہونا چاہیے اور غزہ کے لوگوں کو فوری طور پر ایک جامع ہیلتھ کئیر کا نظام فراہم کیا جانا چاہیے۔

ندیم جان نے کہا ' اقوام متحدہ یا کسی دوسرے ملک کو ان جگہوں تک رسائی ملنی چاہیے جہاں لوگوں کو توجہ اور ادویات اور سہولیات کی زیادہ ضرورت ہے۔

یاد رہے پاکستان نے اب تک امدادی اشیا کی غزہ کے لیے تین کھیپ بھجوائی ہیں۔ تاکہ 22600 سے زائد شہداء کے ساتھ زخمی ہونےوالے والے 57 ہزار سے زائد فلسطینیوں اور بے گھر لاکھوں افراد کی مدد کی جا سکے۔ جبکہ کم از کم 500 پاکستانی ڈاکٹر اور دوسرا طبی عملہ ان بے گھر زخمی اور بیمار فلسطینی بچوں اور بڑوں کی مدد کو جانے کے لیے تیار ہے۔

ایک سوال کے جواب میں وزیر صحت نے ندیم جان نے کہا ' 70 ماہرین طب ، سرکاری حکام اور وزرائے صحت اس عالمی تحفظ صحت کانفرنس میں شرکت کے لیے آئیں گے۔ '

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں