حکومت کا کاروباری افراد کی افزائش کے لیے پاکستان سٹارٹ اپ فنڈ کا آغاز

پاکستان کے آئی ٹی وزیر ڈاکٹر عمر سیف (بائیں سے دوسرے) اسلام آباد، پاکستان میں 9 جنوری 2024 کو پاکستان اسٹارٹ اپ فنڈ کی افتتاحی تقریب میں شریک ہیں۔ (حکومتِ پاکستان)

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

ملک میں کاروباری سرگرمیوں کے لیے ایک مایوس کن سال کے بعد نگران وزیر برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی ڈاکٹر عمر سیف نے کہا کہ حکومت نے آج منگل کو پاکستان سٹارٹ اپ فنڈ (پی ایس ایف) کا آغاز کر دیا جس کا مقصد سٹارٹ اپس میں سالانہ 2 ارب روپے کی سرمایہ کاری کرنا ہے۔

سیف کے مطابق اس کا ڈھانچہ ایکویٹی کے بغیر سرمائے کے طور پر بنایا گیا ہے جو ایک سٹارٹ اپ کے لیے وینچر کیپیٹلسٹ راؤنڈ کو کلوز کرنے اور اپنی پہلی بیرونی سرمایہ کاری بڑھانے میں مدد کرے گا۔

یہ ترقی پاکستانی اسٹارٹ اپس کے لیے ایک غیر متأثر کن سال کے بعد ہوئی ہے۔ 2023 میں آزاد نگرانی کرنے والی فرمز کے مطابق انہوں نے 70 ملین ڈالر سے زیادہ کا اضافہ کیا جو 2021 اور 2022 میں بڑی فنڈنگ کی آمد کے مقابلے میں 70 فیصد سے زیادہ کی نمایاں کمی ظاہر کرتا ہے۔

سیف نے سوشل میڈیا پلیٹ فارم ایکس پر لکھا جو پہلے ٹویٹر تھا، "آج ہم نے پاکستان سٹارٹ اپ فنڈ کا آغاز کیا جو پاکستانی سٹارٹ اپس میں ہر سال 2 ارب روپے تک کی سرمایہ کاری کرے گا۔"

"اگر آپ پاکستان کا ایک اسٹارٹ اپ ہیں اور کوئی غیر ملکی 1 ملین ڈالر کی سرمایہ کاری کے لیے آپ کے اسٹارٹ اپ کا جائزہ لے رہا ہے تو اسے صرف 7 لاکھ ڈالر کی سرمایہ کاری کرنے کی ضرورت ہے - پاکستان اسٹارٹ اپ فنڈ راؤنڈ کو کلوز کرنے میں مدد کے لیے آپ کو 3 لاکھ ڈالر کی امداد دے گا۔"

سیف نے سٹارٹ اپس کو یقین دلایا کہ حکومت فنڈنگ کے بدلے کوئی حصص یا بورڈ پوزیشن حاصل نہیں کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ بین الاقوامی سرمایہ کاروں کے لیے پاکستانی اسٹارٹ اپس میں سرمایہ کاری کے خطرے کو کم کرنے کے لیے پی ایس ایف ڈیزائن کیا گیا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ایک بار جب حکومت اسٹارٹ اپس کو فنڈز جاری کر دے تو "ہم آپ کو بالکل بھی پریشان نہیں کریں گے۔"

انہوں نے لکھا، "ہم پاکستان میں سٹارٹ اپ کے ماحولیاتی نظام میں کم از کم 50 بلین روپے سالانہ کی مالیت پیدا کرنے کی امید رکھتے ہیں۔"

پاکستانی فنڈنگ مانیٹرز نے گذشتہ ہفتے 2024 کے بارے میں امید کا اظہار کیا اور ملک میں عام انتخابات کے انعقاد کے بعد مقامی اسٹارٹ اپس کے لیے مزید امید افزا سال کی توقع کی۔

انہوں نے نوٹ کیا کہ پاکستان کی جاری معاشی بحالی اور انتخابات کے اعلان نے سرمایہ کاروں کا اعتماد بحال کیا ہے جس سے ملک کے اسٹارٹ اپ کے ماحولیاتی نظام کو فروغ ملنے کی امید ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں