پاکستان کی کشمالہ طلعت پیرس اولمپکس کے لیے کوالیفائی کرنے والی پہلی نشانہ باز خاتون

یونیورسٹی کی کل وقتی طالبہ کے کوچ نے ان کی کارکردگی کو 'قابلِ ذکر' قرار دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

پاکستان کی 21 سالہ شوٹر کے کوچ رضی احمد خان نے منگل کو کہا کہ کشمالہ طلعت نے جکارتہ میں ایشین شوٹنگ چیمپئن شپ میں خواتین کے 10 میٹر ایئر پسٹل ایونٹ میں چاندی کا تمغہ جیت کر 2024 کے پیرس اولمپکس میں اپنی جگہ محفوظ کر لی جو پاکستان کے لیے ایک تاریخی کامیابی ہے۔

طلعت نے شاندار کارکردگی سے مجموعی طور پر 236.6 پوائنٹس حاصل کیے جس سے وہ باوقار اولمپک گیمز کے لیے کوالیفائی کرنے والی پاکستان کی پہلی خاتون شوٹر بن گئیں۔

اس کامیابی سے گلفام جوزف اور جی ایم بشیر کے ساتھ پیرس جانے والے پاکستانی نشانے بازوں کی معزز فہرست میں ان کا نام شامل ہو گیا ہے۔

کوچ رضی احمد خان نے عرب نیوز کو بتایا، "کسی بھی [پاکستانی] لڑکی نے شوٹنگ کے زمرے میں اولمپکس کے لیے براہِ راست کوٹہ حاصل نہیں کیا جس سے یہ ایک بہت بڑی اور تاریخی کامیابی بن گئی ہے،" اور مزید کہا کہ 21 سالہ ایتھلیٹ کی صلاحیت کو استعمال کرنے کے لیے غیر ملکی کوچ کی خدمات بھی حاصل کی گئیں۔

انہوں نے مزید کہا، "ان کی کارکردگی قابلِ ذکر رہی ہے بالخصوص اس لیے کہ کشمالہ یونیورسٹی کی کل وقتی طالبہ بھی ہیں۔"

سخت مقابلے کا سامنا کرنے کے باوجود طلعت نے پورے مقابلے میں حوصلہ برقرار رکھتے ہوئے کھیل میں اپنی مہارت کا مظاہرہ کیا۔ ہندوستان کی ایشا سنگھ نے 243.1 پوائنٹس کے ساتھ طلائی تمغہ جیتا جبکہ ایک اور ہندوستانی نشانے باز ریتھم سنگوان نے 214.5 پوائنٹس کے ساتھ کانسی کا تمغہ حاصل کیا۔

خان نے بتایا، "پہلے گذشتہ سال ایشین گیمز میں کانسی کا تمغہ اور 2019 کے ساؤتھ ایشین گیمز میں چاندی کا تمغہ جیتنے کے بعد کشمالہ طلعت کی مستقل مزاجی اور عزم نے انہیں بین الاقوامی شوٹنگ مقابلوں میں نئی بلندیوں تک پہنچا دیا ہے۔"

پیرس اولمپکس کے لیے کوالیفائی کرنے سے طلعت کے لیے 25 میٹر اسپورٹس پسٹل ایونٹ میں حصہ لینے کا دروازہ بھی کھل جاتا ہے اگر اسے قومی فیڈریشن کی جانب سے اس چار سالہ ایونٹ کی دونوں کیٹیگریز کے لیے منتخب کیا جاتا ہے۔

یہ کامیابی پاکستانی ایتھلیٹس کو پیرس اولمپکس کے لیے تیار کرنے کی وسیع تر کوششوں کا حصہ ہے اور طلعت ان 12 ایتھلیٹس میں شامل ہیں جنہوں نے 2022 میں بین الاقوامی اولمپک کمیٹی کی باوقار اسکالرشپ حاصل کی۔

پاکستان کے جیولن سٹار ارشد ندیم پیرس میں جگہ حاصل کرنے والے پہلے مقامی ایتھلیٹ تھے جنہوں نے گزشتہ سال بڈاپیسٹ میں عالمی ایتھلیٹکس چیمپئن شپ میں چاندی کا تمغہ جیتا تھا۔

2022 کے دولتِ مشترکہ گیمز میں طلائی تمغہ جیتنے کے بعد ایک قومی آئیکون ندیم کا مقصد اولمپکس میں اپنی کامیابیوں کو جاری رکھنا ہے۔ انہوں نے بھارت کے نیرج چوپڑا کے ساتھ ایک دوستانہ مقابلے کا آغاز کیا ہے جنہوں نے 2020 کے ٹوکیو اولمپکس میں طلائی تمغہ جیتا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں