پاکستان ہتھیاروں کے نظام کو 'ضروریات' کے مطابق جدید بنا رہا ہے - آرمی چیف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

پاکستانی فوج کے مطابق پاکستان کے آرمی چیف جنرل عاصم منیر نے جمعہ کے روز کہا کہ پاکستان کی مسلح افواج ملک کی "ضروریات" کے مطابق اپنے ہتھیاروں کے نظام کو جدید بنا رہی ہیں۔

فوج کے میڈیا ونگ انٹر سروسز پبلک ریلیشنز (آئی ایس پی آر) کے مطابق آرمی چیف نے یہ بات جنوب مغربی صوبہ بلوچستان کے علاقے سونمیانی میں منعقد ہونے والی مشق البیضا-3 کے دوران فوجیوں سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔

آئی ایس پی آر کے مطابق جنرل عاصم منیر نے کہا، "پاکستان کی مسلح افواج پاکستان کے خلاف پیدا ہونے والے کسی بھی خطرے کو روکنے اور اس کا جواب دینے کے لیے اپنے نظام کو ہماری ضروریات کے مطابق جدید بنا رہی ہیں۔"

آئی ایس پی آر کے مطابق جنرل منیر نے ضم شدہ اور مربوط فائر اور جنگی تدابیر کا معائنہ کیا جن میں مختلف دسترس کے حامل فضائی دفاعی نظام شامل تھے۔ انہوں نے درستگی اور آپریشنل تیاری کے ساتھ اہداف حاصل کرنے کی شاندار کامیابی کو سراہا۔

آئی ایس پی آر نے کہا، "ایچ آئی ایم اے ڈی (ہائی ٹو میڈیم ایئر ڈیفنس) سسٹم اولین فائر میں کامیابی سے ہدف کو زیادہ سے زیادہ حد تک نشانہ بنانے کے قابل تھا۔ اس کے ساتھ پرتوں والے دیگر ہتھیاروں کا نظام تھا جس کی مشق کے دوران آزمائش کی گئی۔ یہ پاکستان کی فضائی سرحدوں کے فضائی دفاع کو بڑھانے میں ایک اہم کامیابی اور سنگِ میل ہے۔"

کراچی کور کمانڈر، آرمی ایئر ڈیفنس کمانڈر، انسپکٹر جنرل (آئی جی) ٹریننگ اینڈ ایویلیوایشن اور آئی جی آرمز سمیت کئی دیگر حکام نے بھی مشق کا مشاہدہ کیا۔

قبل ازیں آرمی ایئر ڈیفنس سینٹر پہنچنے پر جنرل منیر نے یادگارِ شہدا پر پھولوں کی چادر چڑھائی اور لیفٹیننٹ جنرل محمد ظفر اقبال کو ایئر ڈیفنس کور کے کرنل کمانڈنٹ کے عہدے پر فائز کیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں