مچھ میں عسکریت پسندوں کے تین مقامات پر حملے ناکام بنا دیے:نگراں وزیر اطلاعات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

بلوچستان کے بولان کے علاقے مچھ میں عسکریت پسندوں نے راکٹ حملے کیے ہیں۔ صوبائی نگران وزیراطلاعات جان اچکزئی نے ان حملوں کی تصدیق کی ہے اور دعویٰ کیا ہے کہ کسی طرح کا جانی یا مالی نقصان نہیں ہوا ہے۔ بلوچ لبریشن آرمی نے حملوں کی ذمہ داری کا دعویٰ کیا ہے۔

مچھ لیویز کے مطابق واقعے میں ایک پولیس اہلکار سمیت دو افراد زخمی ہوئے ہیں۔

اسی اثنا میں مچھ لیویز نے بتایا ہے کہ قومی شاہراہ بند کر کے کوئٹہ جانے والی ٹریفک کو ڈھاڈر شہر کے قریب روک لیا گیا۔

حکام کے مطابق یہ واقعہ پیر کی شب تقریباً رات 10 بجے کے قریب پیش آیا۔ حملہ آوروں نے سینٹرل جیل مچھ سمیت کئی اہم سرکاری عمارات کی جانب یکے بعد دیگرے راکٹ داغے اور اس کے بعد چھوٹے اور درمیانے درجے کے ہتھیاروں سے شدید فائرنگ شروع کی۔

لیویز فورس نے اس واقعے میں مزید تفصیلات تاحال جاری نہیں کی ہیں۔

یہ حملے ایک ایسے وقت میں ہوئے ہیں، جب پاکستان میں آٹھ فروری 2024 کو عام انتخابات ہونے جا رہے ہیں اور حالیہ دنوں میں بلوچستان اور خیبرپختونخوا میں انتخابی امیدواروں اور الیکشن کمیشن کے عملے پر حملوں کے واقعات سامنے آئے ہیں۔

بلوچستان کے نگران وزیر اطلاعات جان اچکزئی نے سماجی رابطوں کی ویب سائیٹ ایکس پر واقعے کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا ہے کہ مچھ واقعہ میں سکیورٹی فورسز نے دہشت گردوں کے تین مربوط حملے ناکام بنا دئیے ہیں۔

جان اچکزئی نے کہا ہے کہ خوش قسمتی سے واقعے میں کسی تنصیب کو نقصان نہیں پہنچا ہے۔

انہوں نے دعویٰ کیا ہے کہ دہشت گرد پیچھے ہٹ چکے ہیں اور سیکورٹی فورسز ان کا تعاقب کررہی ہیں صبح تک تمام خطرات سے نمٹ لیں گے۔

بلوچستان میں حکام نے بتایا کہ مچھ شہر پر راکٹ حملوں کے واقعے کے بعد کسی بھی ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کے لیے کوئٹہ میں تمام سرکاری ہسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کی گئی ہے۔ اور کسی جانی نقصان سے بچنے کے لیے کوئٹہ آنے والی ٹریفک کو ڈھاڈر کے مقام پر روک لیا گیا ہے۔

دوسری جانب میڈیا رپورٹس کے مطابق مچھ حملے کی ذمہ داری کالعدم تنظیم بلوچ لیبریشن آرمی (بی ایل اے) نے قبول کرتے ہوئے کہا ہے کہ مچھ حملے مجید بریگیڈ ، اسپیشل ٹیکنیکل آپریشنز اسکواڈ اور انٹیلیجنس ونگ نے حصہ لیا ہے۔

مچھ بلوچستان کے کچھی کی ایک تحصیل ہے جو درہ بولان کے کنارے واقع ہے۔ یہاں ملک کی دوسری بڑی جیل ہے۔ مچھ بلوچستان کے مرکزی شہر کوئٹہ سے تقریباً 65 کلو میٹر کے فاصلے پر واقع ہے اور یہاں لوگوں کی اکثریت کا ذریعہ معاش کان کنی سے منسلک ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں