پاکستان کابڑھتی ہوئی مہنگائی کے درمیان شہریوں کی امداد کےلیے رمضان ریلیف پیکج کااعلان

مخصوص آمدن والے افراد کے لیے 32.6 ملین ڈالر کا سبسڈی پیکج

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

پاکستان کے اعلیٰ اقتصادی فیصلہ ساز ادارے نے مارچ میں شروع ہونے والے اسلامی ماہِ صیام سے پہلے منگل کو رمضان ریلیف پیکج کی منظوری دے دی ہے جو مہنگائی کے دوران کم اور درمیانی آمدنی والے طبقات کی سہولت کے لیے ہے۔

پاکستان میں حکومتیں عام طور پر ہر سال پیکج کا اعلان کرتی ہیں تاکہ خوراک کے زیادہ استعمال اور خیراتی کاموں کا بوجھ کم کیا جا سکے جو مقدس اسلامی مہینے کی خصوصیت ہے۔

رمضان ریلیف پیکیج میں دیگر اشیاء کے علاوہ گندم، چینی، خوردنی تیل اور دالوں جیسی ضروری اشیاء پر سبسڈی اور قیمتوں میں کمی شامل ہے۔

ملک کے سرکاری نشریاتی ادارے ریڈیو پاکستان نے منگل کو اطلاع دی، "اقتصادی رابطہ کمیٹی نے مجوزہ رمضان ریلیف پیکیج 2024 کی منظوری دے دی ہے۔ پیکج کے تحت 7.4928 بلین روپے [32.6 ملین ڈالر] کی خالص رقم کے ساتھ بی آئی ایس پی [بینظیر انکم سپورٹ پروگرام] کے ہدفی افراد کو سبسڈی فراہم کی جائے گی۔"

پاکستان میں گذشتہ مئی میں اب تک کی بلند ترین مہنگائی 38 فیصد رہی جو اس سال کے آغاز میں بتدریج کم ہو کر 28.3 فیصد رہ گئی۔

ملک کی قلیل مدتی افراطِ زر توانائی اور خوراک کی قیمتوں میں اضافے کی وجہ سے اس ماہ کے شروع میں سالانہ بنیادوں پر 39.45 فیصد بڑھ گئی جس کی پیمائش حساس قیمت کے اشاریہ سے کی جاتی ہے۔

آزاد مالیاتی تجزیہ کاروں اور بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) سمیت عالمی اداروں کا خیال ہے کہ آئندہ مہینوں میں پاکستان کی افراطِ زر میں بتدریج کمی آئے گی جس سے ممکنہ طور پر لوگوں کو انتہائی ضروری ریلیف ملے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں