سعودی عرب، ایران، امریکہ سمیت انٹرنیشنل ڈرائیور چولستان ڈیزرٹ ریلی کے لیے تیار

بہاولپور میں جاری ریلی میں 150 سے زائد ملکی و غیر ملکی ڈرائیور شریک ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سالانہ 19ویں چولستان ڈیزرٹ جیپ ریلی رواں ہفتے بہاولپور میں شروع ہو گئی جس میں پاکستان، سعودی عرب، ایران اور دیگر ممالک سے ریسنگ کے شوقین 150 سے زائد افراد نے شرکت کی۔

جنوبی پنجاب میں عظیم تر صحرائے چولستان صحرائے تھر کا ایک حصہ بناتا ہے جو پاکستان کے جنوبی صوبہ سندھ اور بھارتی ریاست راجستھان تک پھیلا ہوا ہے۔ چولستان کسی زمانے میں قافلوں کی تجارت کا مرکز تھا جس کی بنا پر قرونِ وسطیٰ میں تجارتی راستوں کی حفاظت کے لیے متعدد قلعے تعمیر کیے گئے جن میں سے بہاولپور کا قلعہ دراوڑ بہترین محفوظ مثال ہے۔

500 کلومیٹر پر محیط صحرائی ریلی کا 19 واں ایڈیشن منگل کو شروع ہوا۔ ٹورازم ڈویلپمنٹ کارپوریشن آف پنجاب کی منیجنگ ڈائریکٹر حمیرا اکرم نے سرکاری ایجنسی اے پی پی کو بتایا کہ اس سال سعودی عرب، برطانیہ، افغانستان، ایران اور امریکہ کے ڈرائیورز شریک ہیں۔

اہلکار نے کہا، "خواتین کے زمرے کو مزید فعال بنایا گیا ہے۔ یہ تقریب روشنی اور موسیقی کے شوز کے علاوہ خوبصورت ثقافتی رقص کے ذریعے صحرائے چولستان کی تاریخ و ثقافت، بہاولپور کے تاریخی محلات، تاریخی عمارات، تاریخی پس منظر، سیاحت اور ثقافت کو نمایاں کرے گی۔"

چولستان میں 22 فروری کو کوالیفائنگ راؤنڈ کا انعقاد کیا گیا جس کے بعد 23 فروری کو تیار شدہ گاڑیوں کا پہلا مرحلہ ہوا۔ 24 فروری کو ڈرٹ بائیک ریس کے ساتھ اسٹاک کیٹیگری کی ریس ہو گی جس کے بعد ثقافتی شو منعقد ہو گا۔

ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر ہیڈ کوارٹر سمیرا ربانی نے میڈیا کو بتایا، "25 فروری کو تیار کیٹیگری ریس اور ٹرک ریس ہوگی جس کے بعد تقریبِ تقسیمِ انعامات ہوگی۔

چولستان ریلی کے دوران قلعہ چولستان کو خوبصورتی سے سجایا جائے گا۔ محکمہ کھیل کبڈی، روایتی کشتی، والی بال اور رسہ کشی سمیت مقابلوں کا انعقاد کرے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں