علی امین گنڈا پور بھاری اکثریت سے خیبر پختونخوا کے 22 ویں وزیر اعلیٰ منتخب

سنی اتحاد کونسل حمایت یافتہ علی امین گنڈا پور نے 90 ووٹ جبکہ ان کے مد مقابل امیدوار عباداللہ نے 16 ووٹ حاصل کئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

آزاد حیثیت میں ڈیرہ اسماعیل خان سے الیکشن جیتنے والے علی امین گنڈاپور بھاری اکثریت سے خیبر پختونخوا کے 22 ویں قائد ایوان منتخب ہو گئے۔

نو منتخب اسپیکر خیبر پختونخوا اسمبلی کی زیر صدارت ہونے والے اجلاس میں خیبر پختونخوا کے 22 ویں قائد ایوان کے لیے ووٹنگ ہوئی۔ آزاد حیثیت میں ڈیرہ اسماعیل خان سے الیکشن جیتنے والے علی امین گنڈا پور کو سنی اتحاد کونسل کی حمایت حاصل تھی جبکہ ان کے مد مقابل مسلم لیگ ن کے عباد اللہ خان تھے جنہیں پیپلز پارٹی اور پی ٹی آئی پارلیمنٹیرینز کی حمایت بھی حاصل تھی۔

سپیکر کے پی اسمبلی نے نتائج کا اعلان کرتے ہوئے بتایا کہ علی امین گنڈا پور نے 90 ووٹ حاصل کئے جبکہ ان کے مد مقابل امیدوار عباداللہ نے 16 ووٹ حاصل کئے، اس طرح علی امین گنڈا پور 90 ووٹ لے کر وزیراعلیٰ منتخب ہو گئے۔

علی امین گنڈا پور کون ہیں؟

سردار علی امین گنڈا پور کا تعلق ڈیرہ اسماعیل خان کے علاقے کولاچی کے زمین دار خاندان سے ہے۔ علی امین گنڈا پور کا خاندان کئی عرصے سے سیاست میں سرگرم ہے۔ ان کے والد آرمی سے میجر ریٹائر تھے اور پرویز مشرف دور میں نگراں وزیر بھی رہے تھے جو گزشتہ روز وفات پا گئے ہیں۔

نامزد وزیر اعلیٰ کافی عرصے سے پاکستان تحریک انصاف سے وابستہ ہیں اور اپنے دبنگ اسٹائل کی وجہ سے جلد ہی پارٹی میں مقبول ہو گئے اور عمران خان کے بھی قریب ہو گئے۔ علی امین خیبر پختونخوا اسمبلی کے رکن اور 2018 میں قومی اسمبلی کے ممبر منتخب ہوئے بعد میں وفاقی وزیر بن گئے۔

سیاست میں داخلہ

علی امین گنڈاپور پہلی بار 2013 میں پی ٹی آئی کے ٹکٹ پر انتخابات میں حصہ لیا۔ وہ پی ٹی آئی کے ٹکٹ پر پی کے 64 ڈی آئی خان سے کامیاب ہو ئے اور پرویز خٹک کابینہ میں وزیر مال کے طور پر منصب سنبھالا۔

سال 2018 کے انتخابات میں دوبارہ حصہ لیا اور این اے 38 ڈی آئی خان سے کامیاب ہوئے۔ اس وقت کے وزیر اعظم عمران خان نے انہیں اپنی کابینہ میں امور کشمیر و گلگت بلتستان کا قلمدان سونپا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں